جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے | امید فاضلی|

جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے | امید فاضلی|
جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے | امید فاضلی|

  

جیسے سچ مُچ اُسی کو دیکھا ہے

اُس کی آواز ہے کہ چہرہ ہے

جس نے چاہا ہے خود کو چاہا ہے

میں بھی جھوٹا ہوں تو بھی جھوٹا ہے

باہیں پھیلا رہے ہو کس کے لیے

وہ تو خوشبو کا ایک جھونکا ہے

جِس کی خاطر صبا ہے آوارہ

میرے انفاس میں وہ مہکا ہے

اے بہارو بتاؤ اب کی برس

اس کے چہرے کا رنگ کیسا ہے

وصل اس کا نہ جانے کیا ہوگا

ہجر جس کا وصال جیسا ہے

سو انگ اتنے بھرے کہ بھول گیا

میرا اپنا بھی ایک چہرہ ہے

اُس سے بھی میری تشنگی نہ بجھی

وہ جو اک بے کنار دریا ہے

دشتِ غربت بھی میرے ساتھ اُمید

میرے ہی گھر میں سانس لیتا ہے

شاعر: اُمید فاضلی

(شعری مجموعہ:دریا آخر دریا ہے،سالِ اشاعت،1979)

Jaisay    Sach    Much    Usi    Ko    Dekha   Hay

Uss    Ki    Awaaz    Hay    Keh     Chehra    Hay

Jiss    Nay    Chaaha    Hay    Khud    Ko    Chaaha   Hay

Main    Bhi    Jhoota   Hun   Too    Bhi    Jhoota   Hay

Baahen    Phaila    Rahay   Ho    Kiss   K    Liay

Wo   To    Khushbu    Ka    Aik    Jhonka   Hay

Jiss    Ki    Khaatir    Sabaa    Hay   Awaara

Meray    Anfaas    Men    Wo    Mehka   Hay

Ay    Bahaaro    Bataao    Ab    Ki    Barass

Uss   K    Chehray   Ka    Rang    Kaisa    Hay

Wasl   Uss    Ka    Najaanay    Kaya    Ho    Ga

Hijr    Jiss    Ka    Visaal    Jaisa    Hay

Sawaang    Itnay    Bharay    Keh   Bhool   Gaya

Mera    Apna    Bhi    Koi    Chehra   Hay

Uss    Say    Bhi   Meri   Tashnagi   Na   Bujhi

Wo    Jo    Ik    Bekinaar    Darya   Hay

Dasht -e- Ghurbat    Bhi    Meray   Saath   UMMEED

Meray   Hi    Ghar    Men    Saans    Leta   Hay

Poet: Ummeed Fazli

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -