اپنی فضا سے اپنے زمانوں سے کٹ گیا | امید فاضلی|

اپنی فضا سے اپنے زمانوں سے کٹ گیا | امید فاضلی|
اپنی فضا سے اپنے زمانوں سے کٹ گیا | امید فاضلی|

  

اپنی فضا سے اپنے زمانوں سے کٹ گیا

پتھر خدا بنا تو چٹانوں سے کٹ گیا

پھینکا تھکن نے جال تو کیوں کر کٹے گی رات

دن تو بلندیوں میں اُڑانوں سے کٹ گیا

وہ سر کہ جس میں عشق کا سودا تھا کل تلک

اب سوچتا ہوں کیا مرے شانوں سے کٹ گیا

پھرتے ہیں پَھن اُٹھائے ہُوئے اب ہوس کے ناگ

شاید زمیں کا ربط خزانوں سے کٹ گیا

ڈوبا ہُوا ملا ہے مکینوں کے خون سے

وہ راستہ جو اپنے مکانوں سے کٹ گیا

مل کر جدا ہوا تھا کوئی اور اُس کے بعد

ہر ایک لمحہ اپنے زمانوں سے کٹ گیا

شاعر: امید فاضلی

(شعری مجموعہ:دریا آخر دریا ہے،سالِ اشاعت،1979)

Apni     Faza    Say    Apnay   Zamaano    Say    Katt    Gaya

Pathar   Khuda    Bana   To    Chattaano    Say    Katt   Gaya

Phainka    Thakan   Nay    Jaal    To    Kiun    Kar    Katay    Gi   Raat

Din   To    Bulanndion    Men   Urraano   Say    Katt   Gaya

Dooba   Hua   Mila    Hay    Makeeno    K   Khoon   Men

Wo   Raasta    Jo    Apnay    Makaano    Say     Katt   Gaya

Wo    Sar    Keh    Jiss    Men    Eshq    Ka   Saoda   Tha   Kall   Talak

Ab    Sochta    Hun    Kaya    Miray    Shaano   Say   Katt    Gaya

Phirtay    Hen    Phan   Uthaaey    Huay    Ab    Hawas    K   Naag

Shayad    Zameen    Ka    Rabt    Khazaano    Say    Katt   Gaya

Wo    Khaof    Hay    Keh    Jurat -e- Dil    Hay    Sipar   Badosh

Teeron    Ka    Rishta    Jesay    Kamaano    Say    Katt    Gaya

Mill    Kar    Juda    Hua    Tha     Koi    Aor    Uss    K    Baad

Har    Aik    Lamha    Apnay     Zamaano    Say   Katt   Gaya

Meray    Sakoot -e-Lab    Say    Gila    Mand    Hay    UMMEED

Wo    Harf -e-Jaan    Jo    Aaj    Fasaano    Say    Katt   Gaya

Poet: Ummeed     Fazli

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -