ماں کی قربانی کی عظیم مثال، سمندر میں کشتی ٹوٹنے پر خاتون 4 روز تک خود پیشاب اور بچوں کو دودھ پلاتی رہی

ماں کی قربانی کی عظیم مثال، سمندر میں کشتی ٹوٹنے پر خاتون 4 روز تک خود پیشاب ...
ماں کی قربانی کی عظیم مثال، سمندر میں کشتی ٹوٹنے پر خاتون 4 روز تک خود پیشاب اور بچوں کو دودھ پلاتی رہی
سورس: Twitter

  

کراکس(مانیٹرنگ ڈیسک)ماں کی محبت عالمگیر سچائی ہے اور اب جنوبی امریکہ کے ملک وینزویلا میں ایک ماں نے اپنے بچوں کی جان بچانے کے لیے قربانی کی ایک ایسی مثال قائم کر دی ہے کہ اس کی کہانی سن کر آپ کی آنکھیں بھی نم ہو جائیں گی۔ دی سن کے مطابق اس 40سالہ خاتون کا نام میریلے شیکون تھا جو اپنے شوہر اور دوست احباب کے ساتھ سمندر کی سیر کو گئی جہاں ان کی کشتی ایک تیز لہر کی زد میں آ کر ٹوٹ گئی اور میریلے کشتی کے ایک ٹوٹے ہوئے تختے پر اپنے دو بچوں 6سالہ بیٹے جوز ڈیوڈ اور 2سالہ بیٹی ماریا بیاٹریز کیمبلر شیکون اور ان کی 25سالہ آیا ویرونیکا مارٹینز کے ساتھ اکیلی رہ گئی۔

رپورٹ کے مطابق کشتی سے ٹوٹ کر الگ ہونے والا یہ ٹکڑا اب لہروں کے رحم وکرم پر تھا۔ میریلے نے جھلسا دینے والی گرمی میں چار دن اپنے دونوں بچوں اور ان کی آیا کے ساتھ اکیلے اس تختے پر گزارے۔ اس دوران میریلے اپنا پیشاب پیتی رہی تاکہ خود کو پانی کی کمی ہونے سے بچا سکے اور اپنے بچوں کو اپنا دودھ پلا کر زندہ رکھ سکے۔ اس دوران میریلے کی موت واقع ہوگئی۔ چوتھے دن ایک بڑی کشتی اس تختے کے قریب سے گزری اور اس کشتی میں سوار لوگوں نے ان بچوں اور ان کی آیا کو ریسکیو کیا۔ چوتھے دن جب بچوں کو ریسکیو کیا گیا تو وہ اپنی ماں کی لاش سے لپٹے ہوئے پائے گئے تھے۔ 

بچوں کی آیا اس تختے پر موجود ایک چھوٹی سی فریج سے برآمد ہوئی تھی۔ اس نے خود کو گرمی سے بچانے کے لیے اس فریج میں چھپا لیا تھا۔حکام کی طرف سے اس حادثے اور میریلے کی موت کی تصدیق کر دی گئی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ میریلے کی موت ڈی ہائیڈریشن کی وجہ سے اس کے اعضاءناکارہ ہو جانے سے ہوئی۔اس کے بچوں اور ان کی آیا کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے جہاں ان کا علاج کیا جا رہا ہے۔رپورٹ کے مطابق کشتی پر سوار میریلے کا شوہر ڈیوڈ کیمبلر اور 4دیگر لوگ تاحال لاپتہ ہیں، جن کے متعلق خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ممکنہ طور پر وہ موت کے منہ میں جا چکے ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -