وہاڑی،مبینہ مقابلہ،ایک ملزم ہلاک،چار افراد،ورثاء کا احتجاج،ٹریفک بند

وہاڑی،مبینہ مقابلہ،ایک ملزم ہلاک،چار افراد،ورثاء کا احتجاج،ٹریفک بند

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


       وہاڑی(بیورو رپورٹ+نمائندہ خصوصی) ایک اور مبینہ جعلی پولیس مقابلہ بے گناہ نوجوان کی جان لے گیا والدہ،بہنوں سمیت ورثا نے لاش ڈی پی او آفس کے سامنے رکھ کر شدید احتجاج کیا ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف ایف آئی درج کرنے کا مطالبہ آخری اطلاع تک احتجاج جاری مظاہرین کی جانب سے شہر کی وی چوک اور دانیوال پھاٹک پر ناکہ بندی شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا، پولیس (بقیہ نمبر49صفحہ7پر)
ترجمان کے مطابق نوجوان 4مقدمات میں ملوث ریکارڈ یافتہ تھا کراس فائرنگ میں اپنے ساتھیوں کی گولیوں کا نشانہ بنا تفصیل کے مطابق گزشتہ رات کسم سر روڈ پر 23 موڑ کے قریب پولیس ترجمان کے مطابق  مسلح موٹرسائیکل سواروں نے گشت پر آنیوالی پولیس وین کے روکنے پر فائرنگ کر دی جس پر پولیس نے بھی اپنے دفاع میں فائرنگ کی کراس فائرنگ کے بعد پولیس نے دیکھا کہ ایک نوجوان زخمی حالت میں پڑا ہے جبکہ 4ملزمان اندھیرے کا فائدہ اٹھاتے ہوئے فرار ہوگئے پولیس نے ملزم کو ہسپتال پہنچایا لیکن وہ جانبر نہ ہو سکا پولیس تھانہ صدر نے ملزمان کے خلاف مقدمہ نمبر 654/22درج کر لیا جبکہ نواحی گاں 21 ڈبلیو بی کے رہائشی 25سالہ علی لیاقت کی والدہ،بہنوں اور بھائی نے اہل علاقہ کے ہمراہ مقتول کی نعش کو پوسٹ مارٹم کے بعد ڈی پی آفس کے سامنے رکھ دیا اوراحتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ علی لیاقت کو ناحق قتل کیاگیاہے اے ایس آئی یونس اور ٹی اے ایس آئی وقاص گھمن نے مخالفین سے بھاری معاوضہ لے کر یہ قتل  کیا ہے پولیس نے مقتول کے پیچھے گاڑی لگا کر اس پر فائرنگ کی وہ اکیلا گھر آرہا تھا پولیس کرائے کی قاتل بنی ہوئی ہے ہمیں انصاف دیا جائے ملوث اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کرکے انہیں سزا دی جائے مظاہرین نے نماز جمعہ کے وقت احتجاج شروع کیا جو آخری اطلاع تک جاری تھا مظاہرین نے وی چوک اور دانیوال پھاٹک کو بند کر کے شہر کو جانیوالی ٹریفک اور ملتان بورے والا کو جانے والا راستہ بلاک کر دیا گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئی شہریوں اور مسافروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا،شہری محصور ہوکررہ گئے اس حوالہ سے رابطہ کرنے پر پولیس ترجمان کا کہنا تھا کہ پولیس مقابلہ میں ہلاک ہونیوالانوجوان ریکارڈ یافتہ نکلا اس سے ناجائز اسلحہ بھی برآمد ہوا احتجاج پر ڈی ایس پی ہیڈکوارٹر،ڈی ایس پی صدر اورڈی ایس پی آرگنائزڈ کرائم نے موقع پر پہنچ کر مظاہرین سے مذاکرات کیے اور ملوث پولیس اہلکاروں کو معطل کر دیا اور یہ یقین دلایا کہ تینوں ڈی ایس پیز کی ٹیم معاملے کی انکوائری کرے گی اور قصور وار ثابت ہونے پر قرار واقعی سزا دی جائے گی