’مساج سنٹر میں روزانہ مجھے 10 سے 15 مرد جنسی درندگی کا نشانہ بناتے ہیں‘ لڑکی ایک بار بیان واپس لینے کے بعد دوسری بار پولیس کے پاس پہنچ گئی

’مساج سنٹر میں روزانہ مجھے 10 سے 15 مرد جنسی درندگی کا نشانہ بناتے ہیں‘ لڑکی ...
’مساج سنٹر میں روزانہ مجھے 10 سے 15 مرد جنسی درندگی کا نشانہ بناتے ہیں‘ لڑکی ایک بار بیان واپس لینے کے بعد دوسری بار پولیس کے پاس پہنچ گئی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارتی شہر گڑگاﺅں کے ایک مساج سنٹر میں کام کرنے والی کم عمر لڑکی نے روزانہ 10سے 15مردوں کے ہاتھوں جنسی زیادتی کا نشانہ بننے کا الزام عائد کر دیا۔ انڈیا ٹوڈے کے مطابق اس لڑکی کی عمر محض 14سال ہے جو کئی ماہ سے ایک مساج سنٹر میں کام کر رہی تھی۔ اس نے پولیس کو درج کرائی گئی ایف آئی آر میں مساج سنٹر کی انتظامیہ کے چار لوگوں کو نامزد کیا ہے اور بتایا کہ یہ لوگ اسے جسم فروشی پر مجبور کرتے رہے۔
چاروں ملزمان میں جھوما، پوجا، روبیل اور صدام شامل ہیں۔ متاثرہ لڑکی نے اپنی ایف آئی آر میں بتایا کہ وہ یہ دوسری بار پولیس کو رپورٹ درج کرا رہی ہے۔ پہلی بار جب اس نے پولیس کو رپورٹ کی تھی تو بااثر ملزمان نے جبری طور پر اسے اپنا بیان واپس لینے پر مجبور کر دیا تھا۔
لڑکی نے بتایا ہے کہ وہ ملزمان میں سے ایک کے ساتھ محبت کرتی تھی اور اس سے شادی کرنا چاہتی تھی۔ ملزم نے بھی اس کے ساتھ شادی کا وعدہ کیا تھا مگر پھر وعدے سے مکر گیا اور اسے جسم فروشی کے دھندے پر مجبور کر دیا۔ لڑکی نے بتایا کہ ملزمان اسے اور اس کی فیملی کو قتل کرنے کی دھمکیاں دیتے تھے جس کی وجہ سے وہ اب تک خاموش رہی۔ مساج سنٹر میں روزانہ مجھے 10سے 15مردوں کے ساتھ تعلق قائم کرنے پر مجبور کیا جاتا تھا۔ رپورٹ کے مطابق پولیس نے مقدمہ درج کرکے تحقیقات شروع کر دی ہیں۔