شہیدطارق اسلم اپنے گھرانے کے واحد کفیل تھے

شہیدطارق اسلم اپنے گھرانے کے واحد کفیل تھے

  

پشاور (کرائم رپورٹر) پشاور یکہ توت میں گزشتہ روز اے این پی کے جلسہ میں ہونے والے خودکش حملہ میں روزنامہ پاکستان کے سینئر سب ایڈیٹر طارق اسلم بھی شہید ہوگئے۔ شہید طارق اسلم اپنے گھرانے کے واحد کفیل تھے۔ سینئر صحافی پانچ بیٹے اور بیوہ کو سوگوار چھوڑ کر اس دنیا فانی سے رخصت ہوگئے۔ طارق اسلم زریاب کالونی محلہ اباسین میں دس ہزار روپے ماہانہ کرایہ کے گھر میں مقیم تھے۔ بدقسمت طارق اسلم جلسہ گاہ میں ایس ایچ کوتوالی عابدرحمان کے ساتھ جلسہ گاہ میں محو گفتگو تھے کہ اچانک خودکش حملہ آور نے شک پڑنے پر خود کو دھماکے سے اڑادیا جبکہ اس نتیجے میں صحافی طارق اسلم اور ایس ایچ او کوتوالی سمیت 18 افراد جام شہادت نوش کرگئے۔ خودکش حملہ آور کا ٹارگٹ سینئر صوبائی وزیر مرحوم بشیربلور کے صاحبزادے ہارون بلور اور ان کے چچا غلام احمد بلور تھے۔ تاہم بدحواسی کی عالم میں خودکش حملہ آور اپنے ہدف تک نہ پہنچ سکا جبکہ غلام احمد بلور اورہارون بلور دونوں معجزانہ طور پر محفوظ رہے۔ صحافی طارق اسلم گزشتہ چھ سال سے روزنامہ پاکستان میں خدمات سرانجام دے رہے تھے۔ طارق اسلم اس سے پہلے بھی گرین شادی ہال کے قریب ہونے والے خودکش حملے میں خوش قسمتی سے بچ گئے تھے لیکن اس بار زندگی نے طارق اسلم کا ساتھ نہیں دیا اور اس خودکش حملے میں خودکش حملہ آور کا ٹارگٹ طارق اسلم اور ایس ایچ او کوتوالی عابد رحمان بن گئے اور یہ دونوں موقع پر جان کی بازی ہار گئے۔

مزید :

صفحہ اول -