آئندہ بجٹ مہنگائی کے خاتمے اور معیشت کے استحکام پر مبنی ہو،لاہور چیمبر

آئندہ بجٹ مہنگائی کے خاتمے اور معیشت کے استحکام پر مبنی ہو،لاہور چیمبر

  

لاہور ( اسد اقبال سے ) لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے نو منتخب عہدیداروں نے پالیسی میکرز پر زور دیا ہے کہ وہ صنعت ،تجارت اور قومی معیشت کو درپیش مسائل کے مستقل حل کیلئے وفاقی بجٹ 2017-18 کاروباری برادری کی تجاویز کی روشنی میں تیار کریں۔آئندہ وفاقی بجٹ میں توانائی بحران کے حل، امن و امان کی صورتحال بہتر بنانے، ریونیو میں براہِ راست ٹیکسوں کا حصہ بڑھانے، بلاواسطہ ٹیکسوں کی سلیب کم ، سیلز ٹیکس کی شرح گھٹانے اور سمگل ہونیوالی اشیاء پر ٹیرف کم کرنے پر توجہ مرکوز کی جائے تاکہ مقررہ معاشی اہداف حاصل کیے جاسکیں جبکہ وزارت تجارت ایف بی آر کو نکیل ڈالے جو بغیر تحقیق کے چھاپے اور ریکارڈ ضبط ،بنکوں سے سٹیک ہولڈرز کی رقوم نکلوانے پر شدید تحفظات کا اظہار کر تے ہوئے وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ آئندہ بجٹ میں حلال فو ڈ پردیگر پانچ سیکٹر کی طرح زیر ہ فیصد ریٹنگ کی جائے جس سے کثیر زرمبادلہ بھی کمایا جا سکتا ہے ۔گزشتہ روزصدرلاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری عبدالباسط ، سینئر نائب صدر امجد علی جاوا او ر نائب صدر ناصر حمید نے پاکستان فورم میں تاجر و صنعتکار تنظیموں کی آواز کو حکومتی ایوانوں میں پہنچانے اور بجٹ تجاویز پر روشنی ڈالتے ہوئے انکا مزید کہناتھا کاروباری برادری کو 2017-18کے بجٹ میں حکومت سے بہت سی مثبت تو قعات وابستہ ہیں ۔ حکومت بجٹ میں توانائی کی قلت پر قابو پانے کیلئے آبی ذخائر کی تعمیر، تھرکول سے توانائی کے حصول ،پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ کی جلد تکمیل اور ایل این جی ٹرمینل کے قیام کیلئے موزوں فنڈز مختص کرے۔ داسو پاور پراجیکٹ، دیامیر بھاشا ڈیم، منڈا ڈیم، گومل زام ڈیم، ستپارہ پاور پراجیکٹ اور کرم تنگی ڈیم کیلئے زیادہ سے زیادہ فنڈز مختص کیے جائیں۔ ہائیڈل پاور پراجیکٹس کیلئے کم از کم 200ارب روپے یا پھر کُل بجٹ کے دس فیصد کے مساوی رقم مختص کی جائے۔ مہنگے تھرمل ذرائع پر انحصار سے صنعتوں کی پیداواری لاگت اور درآمدی بل دونوں بڑھتے جارہے ہیں۔ بائیوگیس سے بجلی پیدا کی جائے۔ تھر کول میں 175ارب ٹن کوئلے کے ذخائر سے سو سال تک ایک لاکھ میگاواٹ بجلی پیدا کی جاسکتی ہے اس پر توجہ دی جائے ۔پاکستان میں انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ، کوئلے، توانائی، زراعت، لائیوسٹاک، ٹیکسٹائل اور فارماسیوٹیکل کے شعبوں میں غیرملکی سرمایہ کاری کی وسیع گنجائش ہے لیکن بدقسمتی سے فنڈز کا فقدان مارکیٹنگ کی راہ میں آڑے آرہا ہے۔ وفاق ایسا بجٹ پیش کر ے جس سے انڈسٹری کو ریلیف ،مہنگائی کا قلع قمع اور معیشت پر مثبت اثرات مر تب ہوں۔

لاہور چیمبر

مزید :

صفحہ آخر -