روس کی شکست کے بعد جہادی عناصر نے افغانستان میں ڈیرے ڈال دئیے: ناصر جنجوعہ

روس کی شکست کے بعد جہادی عناصر نے افغانستان میں ڈیرے ڈال دئیے: ناصر جنجوعہ
روس کی شکست کے بعد جہادی عناصر نے افغانستان میں ڈیرے ڈال دئیے: ناصر جنجوعہ

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )مشیر قومی سلامتی ناصر خان جنجوعہ نے کہا ہے کہ روس کی شکست کے بعد عالمی برادری افغانستان کو تنہا چھوڑ دیا تھا جس کے باعث جہادی عناصر کو ڈیرے ڈالنے کا موقع ملا ۔اگر طالبان کو پہلے الیکشن میں شامل کر لیا جاتا تو آج حالات مختلف ہوتے.

بجلی کی طویل غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ ،’ مریم لائٹ چلی گئی ‘ ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا

اسلام آباد میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے قومی سلامتی کے مشیر جنرل (ر) ناصر خان جنجوعہ نے کہا ہے کہ روس کے افغانستان پر حملے کے وقت یہ سوچ تھی کہ روس افغانستان آیا تو اگلی باری ہماری ہے ، اس مقصد کے لیے ہمارے جہاد کا نام استعمال کیا گیا ، ہمارے مدارس کو استعمال کیا گیا۔جن لوگوں نے افغانستان کو تنہا چھوڑا وہی نائن الیون سے متاثر ہوئے ، اگر طالبان کو پہلے الیکشن میں شامل کرلیا جاتا تو آج حالات مختلف ہوتے۔کہ اگر ہم افغانستان کے ساتھ نہ کھڑے ہوتے تو کیا آج افغانستان ہوتا ، اگر ہم روس کو راہداری فراہم کردیتے تو کیا آج امریکہ اکیلا سپر پاور نہ ہوتا ، روس کی ہار کے بعد افغانستان کو سب چھوڑ کر نکل گئے اور دنیا بھر کے جہادی عناصر نے یہاں ڈیرے ڈال دیے۔

’دوست نے اپنے دوست کی ماں پر ہی قاتلانہ حملہ کردیا کیونکہ۔۔۔‘ ملزم کے پکڑے جانے پر ایسا شرمناک انکشاف کہ ہرکوئی دنگ رہ گیا

مشیر قومی سلامتی کا کہنا تھا کہ ہم پر الزام ہے کہ ہم ڈبل گیم کر رہے ہیں ، اگر ہم افغان طالبان کے ساتھ ہوتے تو پاکستانی طالبان ہم سے کیوں لڑتے۔ دہشتگردی کی اس جنگ میں سب سے زیادہ زخم پاکستان کو لگے ہیں،  پاکستان گذشتہ چار دہائیوں سے فرنٹ لائن سٹیٹ کا کردار ادا کر رہا ہے، روس افغانستان جنگ ہو یا نائن الیون ہم کسی میں شریک نہیں لیکن بھگت رہے ہیں۔

جنرل (ر) ناصر  جنجوعہ کا مزید کہنا تھا کہ کہ قومی سلامتی صرف سرحدوں تک محدود نہیں ، اگر لوگ محفوظ نہیں تو قومی سلامتی کو مکمل نہیں کہا جاسکتا ، قومی سلامتی کے معاملات کو عالمی صورتحال کے تناظر میں دیکھنا ہوگا، سائبر سیکورٹی ، عالمی سیاست ، بین الااقوامی اقتصادیات ، عالمی ملٹری معاملات سب کے سب قومی سلامتی کا حصہ ہیں۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -