کتاب کا نغمہ

کتاب کا نغمہ

کِتاب اپنی طرف پھر بُلا رہی ہے ہمیں

یہ اپنی آنکھ کے آنسو دکھا رہی ہے ہمیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتاب حرف و معانی کا اِک خزانہ ہے

یہ اختصار میں بھی شارحِ زمانہ ہے

ورق ورق نیا قِصہ سنا رہی ہے ہمیں

کِتاب اپنی طرف پھر بُلا رہی ہے ہمیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کِتاب سے ہے فزوں تر، دل و نظر کی کشاد

کِتاب سنگ دلوں کو بنائے درد نہاد

کِتاب خانے سے آواز آ رہی ہے ہمیں

کِتاب اپنی طرف پھر بُلا رہی ہے ہمیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتاب فُرقتِ پیہم کا توڑ کرتی ہے

کوئی رہے نہ رہے ساتھ، دم یہ بھرتی ہے

یہ جامِ وصل ازل سے پلا رہی ہے ہمیں

کِتاب اپنی طرف پھر بُلا رہی ہے ہمیں

مزید : ایڈیشن 2