فرمائشیں پوری کرنے والا ایسا جنّ جوتین دوستوں کو ملاتو انہوں نے کہا کہ ....

فرمائشیں پوری کرنے والا ایسا جنّ جوتین دوستوں کو ملاتو انہوں نے کہا کہ ....
 فرمائشیں پوری کرنے والا ایسا جنّ جوتین دوستوں کو ملاتو انہوں نے کہا کہ ....

  

ایک سمندری طوفان کے نتیجے میں تین مسافر ایک ایسے جزیرے پر جا پہنچے جہاں کھانے، پینے کیلئے پھل اور دیگر اشیاءموجود تھیں مگر وہ باقی دنیا سے بالکل کٹ گئے تھے۔ ایک دن وہ چلتے پھرتے نئی جگہ جا نکلے، ان کو وہاں ایک بوتل پڑی نظر آئی۔ اس کا ڈھکن کھولنے پر ایک جن برآمد ہوا اور کہنے لگا۔ ”کیا حکم ہے میرے آقا! میں صرف تین خواہشات پوری کر سکتا ہوں۔ چونکہ آپ تینوں نے مجھے اس بوتل سے رہائی دلوائی ہے، اس لئے آپ تینوں کی ایک ایک خواہش پوری ہو گی۔ آپ تینوں اپنی، اپنی خواہش بتائیں؟“

ایک نے کہا” مجھے بیوی، بچے یاد آ رہے ہیں، مجھے ان کے پاس لے چلو۔” جن نے چھومنتر کیا اور پہلا آدمی غائب ہو گیا۔

دوسرے نے کہا۔”مجھے اپنے ماں باپ اور بہن بھائی یاد آ رہے ہیں، مجھے ان کے پاس پہنچا دو۔“ جن نے پھر چھو منتر کیا اور دوسرا آدمی بھی غائب ہو گیا۔

تیسرے نے لا پروائی سے کہا۔” نہ تو میرے ماں، باپ ہیں اور نہ میری اپنی بیوی، بچوں سے بنتی ہے۔ میں یہاں زیادہ خوش ہوں لیکن باقی دونوں مسافروں کے بغیر اکیلا، اکیلا محسوس کرتا ہوں۔ تم ان دونوں کو واپس بلا لو۔“

جن نے چھومنتر کیا۔ اب وہ تینوں وہاں موجود تھے مگر جنّ غائب ہو گیا تھا۔

(محمد حبیب۔۔۔ میڈرڈ)

٭٭٭٭

مزید : لافٹر