چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا انصاف کی فراہمی کیلئے تاریخی قدم

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا انصاف کی فراہمی کیلئے تاریخی قدم
چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا انصاف کی فراہمی کیلئے تاریخی قدم

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آ ن لائن) چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ محمد قاسم خان کا انصاف کی فراہمی کیلئے تاریخی قدم، فوجداری مقدمات کے فوری فیصلوں کے حوالے سے سفارشات تیار، قتل سمیت سنگین مقدمات کے فیصلے 6 ماہ، عام نوعیت کے18 ماہ میں ہونگے، چیف جسٹس کی سربراہی میں انتظامی کمیٹی 20 اپریل کورولز کا جائزہ لے گی۔ 

نجی ٹی وی 24نیوز کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کی ججز، پراسیکیوٹر جنرل اور وکلاءپر مشتمل رولز کمیٹی نے کئی اجلاسوں کے انعقاد کے بعد کریمنل کورٹ رولز 2021ئ تیار کر لیے، 10سال یا اس سے زائد سزا والے سنگین فوجداری مقدمات میں ملوث ملزموں کا 6 ماہ میں، 10 سال سے کم کا 18 ماہ میں فیصلہ کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

ذرائع کے مطابق ملزم اور چالان کے پیش ہونے کے بعد عدالت کی جانب سے مدعی وکیل کو فارم اے دیا جائے گا، وکیل 3 روز میں فارم واپس کرکے عدالت کو شہادتیں کروانے کے وقت کے متعلق تحریری طور پر آگاہ کرے گا، فارم کی واپسی کے بعد ملزم کے وکیل کو فارم بی دیا جائے گا، جو وہ 2 روز میں واپس کرے گا۔

 ٹرائل کورٹ کا جج مدعی اور ملزم وکلائ کے فارم موصول ہونے پران کی کونسلنگ کروائے گا، جس کے بعد جج فیصلے کے مہینے کا اعلان کرے گا، مدعی اور ملزم کے وکلائ فارمز کے مطابق کیسز کی پیروی کریں گے۔

 فوجداری مقدمات کی مانیٹرنگ کیلئے ایڈمنسٹریٹو جج بھی مقرر کیے جائیں گے، عدالت مقدمات کے ٹرائل میں تاخیر کا باعث بننے والے مدعی یا ملزم پارٹی کو جرمانہ کرے گی، جرمانے کے بغیر کسی پارٹی کو تاریخ پر التواءنہیں ملے گا۔ 

مزید :

قومی -