کا شتکاروں کا یوٹرن،گندم اوپن مارکیٹ میں فروخت 

  کا شتکاروں کا یوٹرن،گندم اوپن مارکیٹ میں فروخت 

  

 ملتان(سپیشل رپورٹر)ضلع ملتان کے گندم خریداری مراکز پر تعینات عملہ نے گندم میں نمی کا تناسب زیادہ ہونے اور دیگر حیلے بہانوں سے کاشتکاورں سے لوٹ مار کا بازار گرم کرتے ہوئے فی بوری چار سے پانچ کلو گرام جبکہ فی تھیلہ دو سے تین کلو گرام کٹوتی کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔ناجائز کٹوتیوں پر کاشتکار اوپن مارکیٹ میں گندم فروخت کرنے پر مجبور،باردانہ بھی واپس کرنے لگے۔خریداری اہداف خطرے میں پڑگئے۔تفصیل کے مطابق ملتان کی تحصیل (بقیہ نمبر46صفحہ6پر)

جلالپور پیروالا اور شجاعباد کے گندم خریداری مراکز پر گندم خریداری کا سلسلہ ان دنوں عروج پر پہنچ چکا ہے جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے گندم خریداری مراکز پر تعینات عملہ نے کسانوں کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنا شروع کردیا ہے۔مراکز پر گندم فروخت کیلئے لانے والے کاشتکاروں کو نمی کا تناسب زیادہ ہونے سمیت دیگر قانونی اعتراضات لگا کر فی بور ی چار سے پانچ کلو گرام تک جبکہ فی تھیلہ دو سے تین کلو گرام تک گندم کی ناجائز کٹوتی کی جارہی ہے مذکورہ ناجائز کٹوتیوں سے تنگ کاشتکاروں نے اپنی گندم سرکاری گندم خریداری مراکز پر فروخت کرنے کی بجائے اوپن مارکیٹ میں فروخت کرنا شروع کردی ہے۔جبکہ لیا گیا باردانہ بھی واپس کررہے ہیں جس کے باعث محکمہ خوراک کے خریدار ی اہداف خطرے میں پڑ گئے ہیں۔تاہم دوسری جانب ملتان کی تحصیل صدر اور سٹی کے گندم خریداری مراکز پر بھی گندم کی خریداری کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے لیکن کاشتکاروں کی عدم دلچسپی کے باعث انتہائی سست روی کا شکار ہے۔  

مزید :

ملتان صفحہ آخر -