ڈی ایس پی ریڈرز کا عہدہ پولیس ملازمین کیلئے فیورٹ

ڈی ایس پی ریڈرز کا عہدہ پولیس ملازمین کیلئے فیورٹ

  

ملتان (وقائع نگار)محکمہ پولیس کی ناقص حکمت عملی۔ضلع بھر میں پولیس ملازمین اعلی پولیس افسران کے پاس عرصہ دراز سے ریڈرز تعینات ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔جس میں سے زیادہ تر پولیس ملازمین نے ڈی ایس پیز کے پاس ریڈر لگنے کو سنہری موقع قرار دیا ہے۔بار بار ایک ہی جگہ تعیناتی جرائم پیشہ افراد کی سرپرستی کا سبب بننے کا خدشہ۔معتبر ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ محکمہ پولیس ملتان میں عرصہ دراز سے مخصوص ٹولہ بار بار ایک ہی پوسٹ پر تعینات ہو رہا ہے(بقیہ نمبر4صفحہ6پر)

۔جسکی وجہ سے جرائم پر کم اور کمانے پر زیادہ سے زیادہ توجہ دی جارہی ہے۔ایسا ہی کچھ عمل ملتان میں پولیس کے افسران کے ریڈرز کی تعیناتی پر چل رہا ہے۔خاص کر ڈی ایس پیز کے ریڈرز کے اگر دیکھا جائے۔تو انکی ساری سروس ایک جگہ متعدد بار تعیناتی کے گرد گھومتی ہے۔مسلسل ایک ہی جگہ مسلسل لمبی تعیناتی سے ریڈرز حضرات ڈی ایس پیز کے کما پوت بن چکے ہیں۔طویل تعیناتی کی وجہ علاقے میں ہمہ قسم لوگوں سے روابط قائم ہو جاتے ہیں۔ پھر ان افراد کو غیر ضروری فائدہ پہنچا کر اپنی مرضی کا کام لیا جاتا ہے۔ذرائع نے اپنا نام نا ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ ایک ڈی ایس پی کا ریڈر اپنی لمبی تعیناتی کرنے کیلئے "اپنے افسر کی ہر طرح کی پھٹیک " برداشت کرتے ہیں۔یہاں شہریوں نے الزام لگایا ہے ڈی ایس پیز کے ریڈرز سائلین کو پیشی دینے سے لیکر یا پیش ہونے تک کے درمیان کے تمام معاملات میں خرچہ وصول کر رہے ہیں۔اسی وجہ سے جرائم پیشہ افراد کو بھی شلٹر دے رہے ہوتے ہیں۔شہریوں نے پولیس کے اعلی افسران ایڈیشنل آئی جی۔ار پی او اور سی پی او ملتان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ضلع بھر میں سے ایسے ڈی ایس پیز کے ریڈرز کو تبدیل کریں۔جو بار بار ایک ہی جگہ تعینات ہو رہے ہیں۔اور اپنی تعیناتی کو کمائی کا ذریعہ بنایا ہوا یے۔اور انکی جگہ نئے ترقی ہونے والے پولیس ملازمین کو موقع دیا جائے 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -