ڈیرہ اور مضافات میں ملاوٹ شدہ پیٹرول کی کھلے عام فروخت جاری

  ڈیرہ اور مضافات میں ملاوٹ شدہ پیٹرول کی کھلے عام فروخت جاری

  

 ڈیر ہ اسماعیل خان(بیورو رپورٹ)محکمہ انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ کی کی مبینہ ملی بھگت ڈیرہ اسماعیل خان شہر اور مضافات میں ملاوٹ شدہ پیٹرول کی کھلے عام فروخت، گاڑیوں اور موٹر سائیکل کے انجن خراب ہونے لگے، ملاوٹ شدہ پیٹرول اور پیمانوں کی ہیر پھیر کیخلاف محکمہ انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ کی کاروائیاں فائلوں تک محدود، شکایات کے باوجود مخصوص پیٹرول پمپوں کو کھلی چھوٹ، غیر قانونی پیٹرول پمپوں کی چاندی۔ تفصیلات کے مطابق ڈیرہ اسماعیل خان شہر اور مضافات میں ملاوٹ شدہ کیمیکل پیٹرول کی فروخت کا سلسلہ کھلے عام جاری ہے اس کے علاوہ شہر بھر میں اکثر پیٹرول پمپس مالکان کی جانب سے پیمانوں میں بھی ہیر پھیر کیا جارہا ہے۔ شہر اور مضافات کے پیٹرول پمپس کے علاوہ گلی محلوں میں قائم پیٹرول ایجنسیاں جن کو عدالتی احکامات کی روشنی میں فارم کے کی مد میں صرف مٹی کا تیل فروخت کرنیکی اجازت تھی کی آڑ میں گلی محلوں میں قائم ان غیر قانونی پیٹرول ایجنسیوں پر ملاوٹ شدہ کیمیکل پیٹرول کی فروخت سے شہریوں کے موٹر سائیکلوں اور گاڑیوں کے انجن خراب ہورہے ہیں وہیں بدبودار ملاوٹ شدہ پیٹرول سے ان گاڑیوں کے انجن سے نکلنے والے زہریلے دھویں کے ماحول اور انسانی صحت پر بھی خطرناک اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ شہریوں کا اس ضمن میں کہنا ہے کہ محکمہ انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ کے مقامی ذمہ داران کو اس حوالے سے بارہا شکایات کی گئی ہیں تاہم محکمہ انڈسٹریل سٹیٹ کے مقامی ذمہ داران غیر قانونی پیٹرول پمپس و پیٹرول ایجنسیوں کیخلاف لکشمی کی چمک میں اندھے ہوکر کسی قسم کی تادیبی کاروائیوں سے گریزاں ہیں۔ شہریوں نے ڈائریکٹر انڈسٹریز، سیکرٹری خیبر پختونخوا صوبائی حکومت کے دیگر ذمہ داران خصوصا ڈپٹی کمشنر ڈیرہ سے مطالبہ کیا ہے کہ محکمہ محکمہ انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ میں عرصہ دراز سے براجمان مقامی اہلکاروں کیخلاف تادیبی کاروائی عمل میں لائی جائے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -