پاکستان کا کل سرکاری قرضہ 42 ہزار ارب روپے سے تجاوز کرگیا

پاکستان کا کل سرکاری قرضہ 42 ہزار ارب روپے سے تجاوز کرگیا
پاکستان کا کل سرکاری قرضہ 42 ہزار ارب روپے سے تجاوز کرگیا

  

اسلام آباد(آئی این پی ) پاکستان کا کل سرکاری قرضہ42ہزارارب روپے سے تجاوز کرگیا،قرضوں کا حجم جی ڈی پی کا 55فیصد، بیرونی قرضہ 16ہزار ارب،غیر ترقیاتی اخراجات گھٹانے ،برآمدات میں اضافہ، درآمدات میں کمی کی اشد ضرورت پیدا ہوگئی ۔

روزنامہ جنگ کی رپورٹ کے مطابق  دسمبر2021تک پاکستان کا کل سرکاری قرضہ42,745ارب روپے تھا جس میں 26,745ارب روپے کے مقامی قرضے اور 15,950ارب روپے کے بیرونی قرضے شامل ہیں۔ وزارت خزانہ کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ جون 2021میں ملک کا کل سرکاری قرضہ39,859ارب روپے تھا، جو جون 2020میں 36,399ارب روپے تھا۔جون 2019میں پاکستان کا سرکاری قرضہ 32,708ارب روپے تھا۔ مجموعی مقامی قرض سے جی ڈی پی کا تناسب جون 2021 میں 55.1فیصد، جون 2020میں 56فیصد اور جون 2019میں 54.4فیصد تھا۔

ملک کے بیرونی قرضوں سے جی ڈی پی کا تناسب جون 2021میں 28.5 فیصد، جون 2020میں 31.6فیصد اور جون 2019 میں 31.4فیصد تھا۔ ڈالر میں بات کی جائے تو پاکستان کا مقامی قرضہ جون 2021میں 167ارب ڈالر، جون 2020میں138ارب ڈالر اور جون2019میں 127 ارب ڈالر ریکارڈ کیا گیا۔

جون 2021میں پاکستان کا کل سرکاری قرضہ253ارب ڈالر،جون2020میں 216ارب ڈالر اور جون 2019میں200ارب ڈالر ریکارڈ کیا گیا۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -بزنس -