مذہبی ٹور آپریٹرز کو ریلیف پیکیج فراہم کیا جائے، انجم نثار 

 مذہبی ٹور آپریٹرز کو ریلیف پیکیج فراہم کیا جائے، انجم نثار 

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) حج و عمرہ ایران عراق و دیگر مذہبی ٹور آپریٹرز کورونا وائرس کے معیشت پر پڑنے والے اثرات اور کاروباری امور میں نقصان سے تاحال نہ نکل سکے۔ 5 ماہ بعد بھی حکومت کی جانب سے کوئی ریلیف پیکیج نہ مل سکا۔ حج و عمرہ و دیگر مذہبی زیارتوں پر لے کر جانے والے آپریٹرز شدید مالی مشکلات کا شکار ہیں۔ اس سلسلے میں FPCCI کے متعلقہ رہنماؤں نے وزیر اعظم سے پہلی میٹنگ میں اس معاملے کی جانب توجہ مبذول کروائی تھی تاہم تاحال پیشرفت نہ ہوسکی۔ FPCCI کے صدر میاں انجم نثار اور کنوینئر سینٹرل اسٹینڈنگ کمیٹی برائے مذہبی امور سردار شاہد احمد لغاری نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ کووڈ19- سے ہر شعبہ زندگی اور کاروباری امور شدید متاثر ہوئے تھے۔ ہم نے وزیر اعظم عمران خان سے بھی گزارش کی تھیں کہ معاملے کا نوٹس لیں اور مسئلہ حل کرانے کیلئے احکامات جاری کریں لیکن ابھی تک پیشرفت نہ ہوسکی۔ میاں انجم نثار اور سردار شاہد احمد لغاری نے وزیر اعظم پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ حج و عمرہ و دیگر مذہبی ٹور آپریٹرز کیلئے ریلیف پیکیج کا اعلان کیا جائے۔ 2020 اور 2021 کے ٹیکسز میں کمی، بغیر شرح سود قرضے اور 5 سال کیلئے حج کوٹہ مختص کیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی حکومت سعودی عرب کی جانب سے بڑھائی گئی حج و عمرہ ویزہ فیس میں کمی کیلئے سعودی وزارتِ مذہبی امور اور متعلقہ اداروں سے رابطہ کرے۔ کورونا کے باعث اس کام سے وابستہ ٹور آپریٹرز شدید مالی مسائل سے نبردآزما ہورہے ہیں، جس کے ازالہ کی فوری ضرورت ہے۔ 

مزید :

صفحہ آخر -