سب مجھے ایک ایک دھڑکن دیں | راول حسین |

سب مجھے ایک ایک دھڑکن دیں | راول حسین |
سب مجھے ایک ایک دھڑکن دیں | راول حسین |

  

آنکھ کورات بھر جگایا ہے

تب کوئی خواب جھلملایا ہے

سب مجھے ایک ایک دھڑکن دیں

میں نے کاغذ پہ دِل بنایا ہے

رنج تصویر کر گئے مجھ کو

تُو نے دیوار سے لگایا ہے

میں تو حیران ہوں کہ اشکوں کا

رَب نے کیا ذائقہ بنایا ہے

آکے سر پر مِرے سوار ہوا

اس کو آنکھوں پہ کیا بٹھایا ہے

شاعر:راول حسین

(راول حسین کی بیاض سے)

Aankh    Ko    Raat   Bhar    Jagaaya   Hay

Tab   Koi    Khaab    Jhimilaaya   Hay

Sab   Mujhay  Aik   Aik    Dharrkan   Den

Main   Nay    Kaaghaz   Pe   Dil    Banaaya   Hay

Ranj   Tasveer    Kar    Gaey    Mujh   Ko

Tu    Nay   Dewaar    Say    Lagaaya    Hay

Main   To    Hairaan    Hun    Keh    Ashkon   Ka

RAB   Nay    Kaya    Zaaiqa   Banaaya   Hay

Aa   K   Sar   Par    Miray    Sawaar   Hua

Uss    Ko    Aankhon   Pe    Kaya   Bithaaya   Hay

Poet: Rawal   Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -