سندھ ہائیکورٹ،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے محکمہ تعلیم میں غیر قانونی بھرتیوں کا اعتراف کر لیا

سندھ ہائیکورٹ،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے محکمہ تعلیم میں غیر قانونی ...
سندھ ہائیکورٹ،ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے محکمہ تعلیم میں غیر قانونی بھرتیوں کا اعتراف کر لیا

  



کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)سندھ ہائیکورٹ میں ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے محکمہ تعلیم میں غیر قانونی بھرتیوں کا اعتراف کر لیا۔تفصیلات کے مطابق سندھ ہائیکورٹ میں محکمہ تعلیم میں غیرقانونی بھرتیوں کے کیس کی سماعت ہوئی ،دوران سماعت ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے محکمہ تعلیم میں غیر قانونی بھرتیوں کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ بجٹ نہیں،کہاں سے تنخواہیں دیں؟۔

اس پر جسٹس سجاد علی نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل صاحب !یہ آپ ہی کی حکومت کاکارنامہ ہے،جسٹس گلزار احمد نے استفسار کیا کہ اگرغیرقانونی بھرتیاں ہوئیں تونکال کیوں نہیں رہے؟،ملازمین کوالیفائی نہیں کرتے توشوکازنوٹس دے کرفارغ کریں،انہوں نے کہا کہ ملازمین جب تک نوکری پرہوں،تنخواہیں نہیں روکی جاسکتیں۔

عدالت نے ٹربیونل کے فیصلے کیخلاف محکمہ تعلیم کی اپیل مستردکردی ،ٹربیونل نے 19ملازمین کوتنخواہیں جاری کرنے کی ہدایت کی تھی۔

مزید پڑھیں:۔احتساب عدالت، ایڈووکیٹ قاضی مصباح نے اسحاق ڈار کی وکالت کیلئے درخواست دائر کردی

مزید : کراچی


loading...