مودی بھارت کو صرف ہندوؤں کا ملک بنانے پر عمل پیرا،عا لمی میڈیا کی دہائی

    مودی بھارت کو صرف ہندوؤں کا ملک بنانے پر عمل پیرا،عا لمی میڈیا کی دہائی

  



نئی دہلی(آن لائن)مودی بھارت کو صرف ہندوؤں کا ملک بنانا چاہتے ہیں، وہ اپنے ہندو قوم پرست نظرئیے پر جارحانہ طریقے سے عمل پیرا ہیں، کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے اور آسام میں لاکھوں مسلمانوں کی ملک بدری کے واقعات سے ان خدشات کو تقویت ملی جبکہ بابری مسجد کے فیصلے نے جلتی پر تیل کا کام کیا۔عالمی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق متنازعہ بھارتی قانون ان خدشات کو تقویت دے رہا ہے کہ وزیراعظم مودی سیکولر اور اجتماعیت کے اصولوں کو نظر انداز کر کے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کو ہندو قوم بنانا چاہتے ہیں۔ مقبوضہ جموں و کشمیر جوکہ بھارت کی واحد مسلم اکثریتی ریاست تھی، جس کی خصوصی حیثیت اور جزوی خود مختاری ہندو قوم پرستوں کو ایک عرصہ سے کھٹک رہی تھی، مودی حکومت نے 5 اگست کو اسے ختم کر کے دہلی کے ماتحت دو علاقوں میں تقسیم کردیا۔ اس پر مودی نے دعویٰ کیا کہ یہ فیصلہ مقبوضہ کشمیر میں معاشی ترقی اور وہاں کرپشن پر قابو پانے کیلئے کیا گیا ہے جبکہ کشمیریوں کی نظر میں اس کا مقصد ہندوؤں کو بسا کر علاقے کی علیحدہ شناخت ختم کرنا ہے۔ادھر آسام میں رواں سال شہریوں کی رجسٹریشن کے نام پر 19 لاکھ افراد کو شہریت کی فہرست سے نکال دیا گیا جن میں اکثریت مسلمانوں کی ہے، انہیں حراستی کیمپوں یا ملک بدری کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ وزیراعظم مودی کے دست راست امیت شا شہریوں کے قومی رجسٹر کا اطلاق پورے ملک پر کرنے کے عزم کا اظہا رکر چکے ہیں تاکہ 2024 تک غیروں کو ملک بدر کیا جا سکے۔ مسلمانوں کی نظر میں امیت شا کی نظر میں غیروں سے مراد مسلمان ہیں، جنہیں مودی کے پہلے دور میں نصابی کتب سے مسلمانوں کا کردار حذف کرنے کے علاوہ ان تمام شہروں کے نام تبدیل کرتے دیکھا گیا جوکہ اسلامی تاثر دیتے تھے۔باقی کسر بھارتی سپریم کورٹ بابری مسجد کی جگہ مندر تعمیر کرنے کی اجازت دے کر پوری کر چکی ہے جوکہ مودی کے حامیوں کی نظر میں ایک بڑی فتح ہے۔ 1980 کی دہائی سے اس مندر کی تعمیر مودی کی جماعت بی جے پی کے انتخابی ایجنڈے میں شامل ہے، امیت شا مندر کی تعمیر چار ماہ میں مکمل کرنے کا عندیہ دے چکے ہیں۔ ناقدین کی نظر میں سپریم کورٹ کا فیصلہ مسجد کے انہدام کو جائز قرار دیتے کے مترادف ہے، اس فیصلے نے غنڈہ گردی اور تشدد کے مزید واقعات کی راہ ہموار کر دی ہے۔ بی جے پی کا نیا اقدام ہمسایہ ملکوں سے آنیوالے لاکھوں غیر قانونی تارکین کیلئے شہریت کا حصول آسان بنانا ہے، جن میں صرف ہندو، سکھ، جین، بدھ مت کے پیروکار اور مسیحی شامل ہیں۔ شہریت کے نئے قانون کیخلاف ملک بھر میں بڑے پیمانے پر مظاہرے جاری ہیں، ان مظاہروں میں شمال مشرقی ریاستیں پیش پیش ہیں، انہیں تشویش ہے کہ نیا قانون بنگلہ دیش کے غیر قانونی تارکین کیلئے شہریت کی راہ ہموار کرے گا جن میں اکثریت ہندوؤں کی ہے۔

عالمی میڈیا/دہائی

مزید : صفحہ اول


loading...