ہائی کورٹ: پولیس انسپکٹر کو40سال گزرنے کے باوجود ترقی، واجبات نہ ملنے پرآئی جی 14جنوری کو اصالتاً طلب

  ہائی کورٹ: پولیس انسپکٹر کو40سال گزرنے کے باوجود ترقی، واجبات نہ ملنے پرآئی ...

  



ملتان (خبر نگار خصوصی) ہائیکورٹ ملتان بنچ کے جج جسٹس مجاہد مستقیم احمد نے سپریم کورٹ کے حکم پر بحال ہونے والے پولیس انسپکٹر کو(بقیہ نمبر47صفحہ12پر)

40 سال گزرنے کے باوجود ترقی اور واجبات نہ ملنے پر انسپکٹر جنرل آف پولیس کو 14 جنوری کو اصالتا طلب کرلیا ہے۔ قبل ازیں فاضل عدالت میں پٹیشنر راؤ محمد لقمان کے وکیل ملک شوکت محمود نے درخواست دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ عدالت عظمیٰ نے چالیس سال بعد ان کے موکل راؤ محمد لقمان کو نوکری پر بحال کرنے،سینارٹی کے مطابق ترقی دینے اور تمام واجبات ادا کرنے کا حکم دیا تھا۔ لیکن پولیس ڈیپارٹمنٹ نے انہیں ترقی دی نہ ہی واجبات ادا کیے۔ تاہم بحالی کا نوٹیفکیشن جاری کردیا اور عدالت عالیہ میں 6 جولائی 2018 کو یہ نوٹیفکیشن جمع کرادیا کہ عدالت عظمیٰ کے حکم پر عملدرآمد کردیا گیا ہے۔ 25 ستمبر کو ہائی کورٹ ملتان بنچ کے جج جسٹس مزمل اختر شبیر نے توہین عدالت کی درخواست پر ایک ہفتے میں معاملات نمٹانے کا حکم دیا جس پر اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل خان نے مہلت ایک ہفتہ سے بڑھا کر دو ہفتے کرنے کی استدعا کی جسے قبول کرلیا گیا لیکن مہلت لینے کے باوجود تاحال ان احکامات پر عملدرآمد نہ ہوسکا ہے۔

طلب

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...