سینٹ الیکشن وقت سے پہلے نہیں ہو سکتے،جاہل وزیر بیان بازی کر رہے ہیں: لطیف کھوسہ 

  سینٹ الیکشن وقت سے پہلے نہیں ہو سکتے،جاہل وزیر بیان بازی کر رہے ہیں: لطیف ...

  

 اسلام آباد(آن لائن) پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما و سینئر وکیل سردار لطیف خان کھوسہ نے کہا ہے کہ سینٹ الیکشن وقت سے پہلے کسی صورت نہیں ہوسکتے، آئین کے آرٹیکل 224کی شق نمبر 3بڑی واضح ہے،صرف آئینی ترامیم سے ہی یہ ممکن ہے لیکن اس کیلئے حکومت کے پاس دو تہائی اکثریت ہونی چاہیے جو ان کے پاس نہیں، سینٹ کے الیکشن کروانے میں حکومت کاکوئی تعلق نہیں، کوئی وزیر، مشیر، صدریا وزیراعظم مداخلت نہیں کرسکتا یہ الیکشن کمیشن کا کام ہے،ناجانے یہ جاہل وزیر کس طرح سے بیان بازی کررہے ہیں، پتہ نہیں اٹارنی جنرل  آف پاکستان نے کون سی کتابیں پڑھی ہوئی ہیں اگر آئین کا آرٹیکل واضح ہو تو اس میں سپریم کورٹ بھی کچھ نہیں کرسکتی،پیپلز پارٹی پی ڈی ایم کے فیصلوں پر ہر صورت عملدرآمد کرے گی خواہ اس کیلئے اسمبلی کی قربانی بھی دینا پڑے۔گزشتہ روزیہاں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے لطیف کھوسہ نے کہا کہ آئین کے آرٹیکل 226کے تحت شو آف ہینڈز کی ووٹنگ بھی نہیں کروائی جاسکتی،صرف سیکرٹ بیلٹ کے ذریعے ہی ووٹنگ کروائی جاسکتی ہے۔50فیصدسینیٹرز ہر تین سال بعد ریٹائر ہوجاتے ہیں اور یہ آئین میں بڑا واضح لکھا ہے کہ جس ماہ میں سینیٹرز کی سیٹیں خالی ہوتی ہیں اسی ماہ میں ہی الیکشن کروانے ہوتے ہیں۔ سینٹ کے الیکشن کروانے میں حکومت کاکوئی تعلق نہیں خواہ وہ وقت سے پہلے ہوں یا بعد میں الیکشن کروانا الیکشن کمیشن کا کام ہوتاہے اس میں حکومت کی مداخلت نہیں ہوسکتی کوئی وزیر کوئی مشیر،وزیراعظم، صدر اس میں مداخلت نہیں کرسکتا۔

لطیف کھوس

مزید :

صفحہ آخر -