توشہ خانہ ریفرنس، احتساب عدالت کا نیب کے تیسرے گواہ کا بیان قلمبند

 توشہ خانہ ریفرنس، احتساب عدالت کا نیب کے تیسرے گواہ کا بیان قلمبند

  

 اسلام آباد (این این آئی) اسلام آباد کی احتساب عدالت نے توشہ خانہ ریفرنس میں نیب کے تیسرے گواہ محمد خلیل کا بیان قلمبند کرلیا۔ سابق صدر آصف علی زرداری اور یوسف رضا گیلانی سمیت دیگر ملزمان کیخلاف توشہ خانہ ریفرنس پر سماعت احتساب عدالت کے جج سید اصغر علی نے کی۔ سابق صدر آصف علی، یوسف رضا گیلانی، عبدالغنی مجید اور انور مجید کی ایک دن کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی گئی، نیب پراسیکوٹرز سردار مظفر عباسی عرفان بھولا، وسیم جاوید اور کاونسل ارشد تبریز عدالت کے روبرو پیش ہوگئے،گواہ سے بیان سے پہلے حلف لیا گیا،نیب گواہ سیکشن آفیسر کیبینٹ ڈویڑن کلیم احمد شہزاد کا بیان مکمل کر لیا گیا۔ گواہ نے کہاکہ آصف علی زرداری کی ماہانہ تنخواہ 80 ہزار روپے تھی، سات ہزار ٹیکس کاٹا جاتا، آصف علی زرداری کو مجموعی طور پر بطور صدر الاونس سمیت 50 لاکھ روپے ملے، میں تفتیشی افسر کے سامنے توشہ خانہ ریفرنس کے سلسلے میں پیش ہوا۔نیب گواہ محمد خلیل کا بیان ریکارڈ کیا گیا۔ گواہ نے کہاکہ کیبنیٹ ڈویژن نے یوسف رضا گیلانی اور آصف زرداری کی بلٹ پروف گاڑیوں سے متعلق ریکارڈ مانگا، یوسف رضا گیلانی اسوقت وزیراعظم تھے، 2013 سے 2017 کے درمیان میں نے تفیشی افسر کو ریکارڈ فراہم کیا۔ وکیل سر دار مظفر عباسی نے کہاکہ ہم نے کل ہی کہہ دیا تھا کہ ہم چار گواہوں کے بیان ریکارڈ کروائیں گے۔ وکیل ارشد تبریز نے کہاکہ کیا میرا اس عدالت میں کوئی حق نہیں کہ میں کوئی بات کروں۔ سر دار مظفر عباسی نے کہاکہ یہ بار بار اعتراض کر رہے ہیں، ہم ے تو کل ہی بتا دیا تھا۔ عدالت نے کہاکہ گواہوں کا مجھے تو نہیں پتہ یہ تو نیب نے پیش کرنے ہیں۔ عدالت نے وکیل ارشد تبریز کو ہدایت کی کہ کوئی اعتراض ہے تو عدالت کو لکھوائیں۔ بعد ازاں کیس کی سماعت 24 دسمبر تک ملتوی کر دی گئی۔

توشہ خانہ 

مزید :

صفحہ آخر -