خودکشی کرنیوالی طالبہ کوقبائلی سرداروں سے معافی مانگنے پرمجبورکیاگیا

خودکشی کرنیوالی طالبہ کوقبائلی سرداروں سے معافی مانگنے پرمجبورکیاگیا
خودکشی کرنیوالی طالبہ کوقبائلی سرداروں سے معافی مانگنے پرمجبورکیاگیا

  

کوئٹہ (ویب ڈیسک) بلوچستان کے علاقہ قلعہ سیف اللہ میں سیکنڈ ایئر کی طالبہ ثاقبہ نے خود کشی کیوں کی، اخبار روزنامہ دنیا کے مطابق ثاقبہ کے والد کا کہنا ہے کہ کالج کی پرنسپل نے ان سے کہا تھا کہ آپ کی بچی نے مظاہرہ کیوں کیا، اب پہلے قبائلی سرداروں سے معافی مانگیں۔ انہوں نے بتایا کہ ان کے کہنے پر میں مقررہ تاریخ پر خود اپنی بیٹی کے ساتھ ان کے پاس گیا اور حاجی صدیق اور سینیٹرعثمان کاکڑ سے معافی مانگی، پرنسپل پھر بھی نہ مانی۔ان کا مزید کہنا تھا سینیٹرعثمان کاکڑ نے پرنسپل کے ساتھ معاملہ حل کرانے کی یقین دہانی کرائی تھی، دوبارہ جا کر بھی پرنسپل اور کلرک سے معافی مانگی۔ ثاقبہ کے والد نے مزید کہا کہ پرنسپل کا دیور "کلرک" پشتونخوا میپ کا عہدیدار ہے۔

مزید : کوئٹہ