دہشتگردی کے خاتمے کیلئے سخت فیصلے کرنا ہونگے‘ علامہ سبطین حیدر

دہشتگردی کے خاتمے کیلئے سخت فیصلے کرنا ہونگے‘ علامہ سبطین حیدر

ملتان (سٹی رپورٹر)شیعہ علما کونسل پنجاب کے صدر علامہ سید سبطین حیدر سبزواری نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے ناسور کو ختم کرنے کے لئے سخت فیصلے کرنا ہوں گے۔ فوجی عدالتیں جمہوری(بقیہ نمبر23صفحہ12پر )

حکومت میں مناسب نہیں ، لیکن لگتا ہے کہ موجود ہ حالات میں زہر کا پیالا پینا ہی ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے امام بارگاہ رضویہ میں اسلامی تحریک کے مرکزی شعبہ تبلیغات کے انچارج پروفیسر خادم حسین لغاری کے چہلم کے اجتماع اور سیہون شریف میں لعل شہباز قلندر کے مزار پر ہونے والے حملے کے خلاف احتجاجی مظاہرے سے خطاب میں کیا۔ مرکزی نائب صدر علامہ محمد رمضان توقیر، مولانا موسی ٰ رضا جسکانی، مولانا نجم الحسن، مولانا احسان علی اتحادی، مولانا اقبال حسین مقصود پوری، مولانا منور نقوی، سید ندیم حیدر نقوی،مولانا سجاد انقلابی اور دیگر رہنما وں نے بھی خطاب کیا علامہ سبطین سبزواری کا کہنا تھا کہ حکمرانوں نے بنکرز میں بند ہوکر خود کو بند کرلیا ہے ، لیکن عوام کو دہشت گردوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ پر امن علما اور شریف شہریوں کو بدنام زمانہ فورتھ شیڈول میں ڈالاجارہا ہے،جبکہ تکفیری دہشت گرد دندناتے پھر رہے ہیں۔علامہ سبطین سبزواری نے کہا کہ مزارات اولیا کی سکیورٹی رینجرز کے حوالے کی جائے۔ پنجاب اسمبلی ، مہمند ایجنسی ، پشاور، کوئٹہ اور دربار لعل شہباز قلندر پر بم دھماکے اور مظفر�آباد میں علامہ تصور حسین جوادی پر قاتلانہ حملہ نیشنل ایکشن پلان کی کامیابی کے دعووں کی نفی ، سکیورٹی اداروں کی کارکردگی اور سیاسی قیادت کی ترجیحات پر سوالیہ نشان ہے۔ پروفیسر خادم حسین لغاری کی دینی ، تعلیمی اور تبلیغی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ مرحوم ،تعمیرمساجدمنصوبے کے تحت علاقے میں 300 سے زائد مساجد کی تعمیر کروائی اور مستحقین کی امداد کا ادارہ بھی چلا رہے تھے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...