ایران بھارت میں توانائی، تجارت، دفاع میں تعاون بڑھانے پر اتفاق

ایران بھارت میں توانائی، تجارت، دفاع میں تعاون بڑھانے پر اتفاق

نئی دہلی ( صباح نیوز ) ایرانی صدر حسن روحانی اور بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے دونوں ممالک کے درمیاں توانائی، تجارت، دفاع اور سکیورٹی سمیت مختلف شعبوں میں باہمی تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا ہے ،دونوں ملکوں کے سربراہان مملکت کے درمیان باضابطہ سرکاری مذاکرات کے بعد باہمی تعاون کے متعدد سمجھوتوں پر دستخط ہوئے اور معاہدوں کی دستاویزات کا تبادلہ کیا گیا،دستاویزات کے تبادلے کی تقریب کے موقع پر دونوں ملکوں کے سربراہان مملکت نے مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کیا- ایرانی میڈیا کے مطابق صدر ڈاکٹر حسن روحانی نے ایران اور بھارت کے دیرینہ تاریخی اور ثقافتی تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کے عوام کے رشتے اور تعلقات سیاسی اور اقتصادی تعلقات سے کہیں بالاتر ہیں،اس سے پہلے بھارتی صدر رام ناتھ کووند اور وزیر اعظم نریندرمودی نے راشٹر پتی بھون میں ڈاکٹر حسن روحانی کا پرتپاک سرکاری استقبال کیا بعد میں وزیراعظم کے دفتر کی عمارت حیدرآبا ہاس میں صدر ڈاکٹر حسن روحانی اور ہندوستان کے وزیراعظم نریندرمودی نے دونوں ملکوں کے اعلی سطحی وفود کی موجودگی میں باضابطہ مذاکرات ہوے ۔حسن روھانی نے ایران اور ہندوستان کے تاریخی اور ثقافتی تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کی اقوام صدیوں سے ایک دوسرے کے قریب رہی ہیں اور ہماری کوشش ہے کہ یہ تعلقات پہلے سے بھی زیادہ فروغ پائیں دہشت گردی اور انتہاپسندی سے لڑنے کا عزم رکھتے ہیں،ایران ا بھارت تعلقات کسی ملک کے نقصان میں نہیں، نریندر مودی نے بھی ہندوستان اور ایران کے تاریخی اور تہذیبی تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ملکوں کے تعلقات بہت ہی پرانے ہیں اور باہمی تعاون سے یہ تعلقات پہلے سے بھی زیادہ مستحکم ہوں گے انہوں وزیراعظم نے چابہار بندرگاہ کی اہمیت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ نئی دہلی چاہتا ہے کہ چابہارزاہدن ریلوے لائن پراجیکٹ جلد سے جلد مکمل ہو پڑوسیوں کو دہشت گردی سے پاک اور افغانستان کو محفوظ اور خوشحال بنانا چاہتے ہیں۔ڈاکٹر حسن روحانی نے گاندھی کی سمادھی پرپھولوں کی چادر چڑھائی اور انہیں خراج عقیدت پیش کیا بھارتی وزیرخارجہ سشما سوراج نے کہا کہ ان کا ملک تمام میدانوں میں ایران کے ساتھ تعلقات کو فروغ دینے کا خواہشمند ہے۔

ایران بھارت

مزید : ملتان صفحہ اول


loading...