جمعہ خان کا آزاد بلوچستان تحریک سے علیحدگی کا اعلان

جمعہ خان کا آزاد بلوچستان تحریک سے علیحدگی کا اعلان
جمعہ خان کا آزاد بلوچستان تحریک سے علیحدگی کا اعلان

  

ماسکو (ویب ڈیسک) روس میں گزشتہ دو دہائیوں سے مقیم سینئر بلوچ رہنماءڈاکٹر جمعہ خان مری اپنے حامیوں کے ہمراہ نام نہاد علیحدگی پسند تحریک سے منحرف ہوگئے۔

سوشل میڈیا رپورٹس کے مطابق ہفتہ کو ماسکو میں مقیم پاکستان کے تمام صوبوں بالخصوص بلوچ کمیونٹی کے نمائندوں نے ”یونائٹیڈ وی سٹینڈ،ڈیوائیڈڈ وی فال“کے عنوان سے ”پاکستان یوم اتحاد“منایا۔تقریب اس وقت پر اپنے کلائمیکس پر پہنچ گئی جب بلوچ قوم پرست رہنما،دانشور اور بلوچ علیحدگی پسند تحریک کے سب سے سینئر سیاسی رکن ڈاکٹر جمعہ خان مری نے تقریب میں شرکت کی اور اپنے حامیوں کے ہمراہ تحریک سے علیحدگی کا اعلان کر دیا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ ڈاکٹر جمعہ خان گزشتہ دوہائیوں سے خود ساختہ جلا وطنی کے تحت ماسکو میں مقیم ہیں۔ وہ بلوچ رہنماءاور سابق گوریلا کمانڈر اور بجرانی مری قبیلے کے چیف میر ہزار خان مری کے صاحبزادے ہیں۔ڈاکٹر جمعہ خان مری کو دنیا بھر میں مقیم بلوچ تارکین وطن انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔تقریب سے اپنے جذباتی خطاب میں ڈاکٹر جمعہ خان مری نے اپنے حامیوں کے ہمراہ آذادی کی تحریک سے علیحدگی کا اعلان کرتے ہوئے بیرون ممالک فری بلوچستان موومنٹ کیخلاف ’‘اوورسیز پاکستانی بلوچ کمیونٹی“کے نام سے نئی تنظیم کے آغاز کا اعلان کیا۔

ڈاکٹر جمعہ خان مری نے کہا کہ وہ براہمداغ بگٹی،حربیار مری، اور مہران مری جیسی شخصیات کا تمام بین الاقوامی فورم پر مذموم عزائم کو بے نقاب کرینگے۔انہوں نے کہا کہ وہ سیاسی پناہ پر بیرون ممالک مقیم گمراہ کئے گئے بلوچوں کو قومی دھارے میں لانے پر امن بات چیت کے ذریعے انکے مسائل کرنے کیلئے کوششیں جاری رکھیں گے۔ڈاکٹر جمعہ خان مری نے خان آف قلات کو بھی انکی حمایت اور تنظیم میں شمولیت کی دعوت دی۔انہوں نے کہا کہ بلوچوں کی سالمیت کو سخت نقصان پہنچا جب براہمداغ بگٹی،حربیار مری اور مہران مری نے بھارتی قومیت کیلئے درخواستیں دیں اور جینواءمیں گاندھی کے مجسمے پر پھول چڑھائے۔

مزید : بین الاقوامی