سکھ خاتون انتقال کرگئی، بیٹے اور بیٹی کا لاش وصول کرنے سے انکار، مسلم خاندان نے آخری رسومات ادا کرکے دل جیت لیے

سکھ خاتون انتقال کرگئی، بیٹے اور بیٹی کا لاش وصول کرنے سے انکار، مسلم خاندان ...
سکھ خاتون انتقال کرگئی، بیٹے اور بیٹی کا لاش وصول کرنے سے انکار، مسلم خاندان نے آخری رسومات ادا کرکے دل جیت لیے

  



چندی گڑھ (ڈیلی پاکستان آن لائن) بھارتی ریاست پنجاب میں ایک معمر سکھ خاتون کے انتقال کے بعد اس کے بیٹے اور بیٹی نے لاش وصول کرنے سے انکار کردیا جس کے بعد ایک مسلم خاندان نے اس کی آخری رسومات ادا کیں، مسلمانوں کے اس جذبے کی بڑے پیمانے پر ستائش کی جارہی ہے۔

پنجاب کے ضلع بھٹنڈا میں ایک خاتون لوگوں کے گھروں میں کام کاج کرتی تھی اور کرائے کے مکان میں اکیلی رہتی تھی ، پیر کے روز اس کا انتقال ہوگیا جس کے بعد اس کے بیٹے اور بیٹی سے رابطہ کیا گیا تو دونوں نے ہی ماں کی لاش وصول کرنے سے انکار کردیا جس کے بعد مسلمان خاندان نے اس کی آخری رسومات ادا کیں۔

خاتون کی آخری رسومات ادا کرنے والے محمد اسلم نے بتایا کہ سکھ خاتون طویل عرصے سے یہاں اکیلی رہ رہی تھیں، ہم انہیں رانی چاچی کہہ کر پکارتے تھے، ہمیں کبھی بھی ان کے خاندان کے بارے میں معلومات نہیں تھیں لیکن جب ان کا انتقال ہوا تو ان کے موبائل سے ان کی بیٹی اور بیٹے کے نمبر ملے، جب میں نے انہیں کال کی تو انہوں نے لاش وصول کرنے سے انکار کردیا۔

محمد اسلم کے مطابق رانی چاچی کے بیٹے نے بتایا کہ ان کی والدہ کی 1999 میں طلاق ہوگئی تھی، ان کی والدہ کا اصل نام دلپریت کور ہے اوران کا میکہ اور سسرال دونوں ہی معاشی اعتبار سے انتہائی خوشحال ہیں، لیکن چونکہ وہ اپنی ماں سے رشتہ ختم کرچکے ہیں اس لیے وہ اس کی آخری رسومات ادا نہیں کریں گے۔ بیٹے اور بیٹی کے انکار کے بعد محمد اسلم نے دلپریت کور کی آخری رسومات ادا کیں جس پر انہیں خوب سراہا جا رہا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس