اے ڈی سی آر آفس کا اسسٹنٹ اثاثوں کی تفصیل جمع کروانے سے جان چھڑانے لگا

اے ڈی سی آر آفس کا اسسٹنٹ اثاثوں کی تفصیل جمع کروانے سے جان چھڑانے لگا

  

لاہور(اپنے نمائندے سے)اے ڈی سی آر آفس کا کروڑ پتی اسسٹنٹ محکمہ اینٹی کرپشن میں جاری انکوائری میں اپنے اثاثوں کی تفصیل جمع کروانے سے جان چھڑانے لگا،محکمہ اینٹی کرپشن میں اپنے داخل کئے گئے بیان میں لاکھوں روپے ماہانہ آمدنی اور پی آئی آے سوسائٹی میں کروڑوں مالیت کی کوٹھی کی بابت کوئی تسلی بخش جواب نے دے سکا، محکمہ اینٹی کرپشن نے مذکورہ اسسٹنٹ کے خلاف شکنجہ تیار کر لیا، قریبی رشتہ داروں کے اثاثے بھی طلب کر لئے گئے ،معلومات کے مطابق ایڈیشنل ڈسٹرکٹ کلکٹر لاہور آفس کا اسسٹنٹ ریاض حسین ناجائز اثاثہ جات ،کرپشن اور سرکاری فنڈز میں خرد برد کے الزامات کے تحت محکمہ اینٹی کرپشن میں جاری انکوائر ی میں اپنے جوابی بیان میں کیس کا رخ بدلنے کی کوشش میں خود ہی پھنس گیا ہے،جوابی بیان کے مطابق اسسٹنٹ ریاض حسین 1980میں بھرتی ہوا اور 1985میں اپنے آفس سے اجازت حاصل کرکے ایک مکان تعمیر کروایا جس میں اس کے شادہ شدہ بچے رہائش پذیر تھے اور بعد ازاں 2012میں سابقہ مکان فروخت کرنے کے بعد ایک پلاٹ ایک کنال پی آئی اے سوسائٹی میں حاصل کیا جس کو تعمیر کرنے کے بعد اس کے شادی شدہ بچے اس میں رہائش پذیر ہیں ،برسر روزگار پانچ بچے اور تین بہوئیں کی ماہانہ آمدن 3لاکھ 75ہزار ہے جو کہ باہم رقم بچا کر پی آئی اے سوسائٹی میں کوٹھی تعمیر کی ہے ،محکمہ اینٹی کرپشن نے مذکورہ بیان کی روشنی میں ملزم ریاض حسین زاہد سے اس کے اثاثوں کے گوشوروں کی تفصیلات طلب کرلی جس میں ہر بچے کی ماہانہ آمدنی،گھر کے اخراجات،بجلی ،گیس اور پانی کے بل،سابقہ مکان کتنے میں فروخت کیا ،ہر ماہ کتنی رقم بچائی کہ پی آئی اے سوسائٹی میں ایک کنال پلاٹ کو حصول کے بعد اس پر لاکھوں روپے لگا کر کوٹھی تعمیر کی جس کی موجودہ مالیت ایک کروڑ چالیس سے زائد بنتی ہے ،اس کے علاوہ ملزم کے تمام قریبی رشتہ داروں کے اثاثوں کی تفصیلات بھی طلب کر لی گئیں ہیں کیونکہ مبینہ اطلاعات کے مطابق مذکورہ اسسٹنٹ نے اپنے رشتہ داروں کے نام پر بھی بہت سی جائیدادیں اور بنک بیلنس بنا رکھا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -