چین کا چاند کے زمین سے اوجھل چہرے سے نقاب اٹھانے کا اعلان

چین کا چاند کے زمین سے اوجھل چہرے سے نقاب اٹھانے کا اعلان
 چین کا چاند کے زمین سے اوجھل چہرے سے نقاب اٹھانے کا اعلان

  

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) ایک طرف امریکہ کے نیل آرمسٹرانگ کو چاند پر بھیجنے کے مشن کو ڈرامہ قرار دیا جا رہا ہے اور بتایا جا رہا ہے کہ نیل آرمسٹرانگ کے چاند پر اترنے کی ویڈیو جعلی تھی اور اس کی عکسبندی ایک سٹوڈیو میں کی گئی، اس ویڈیو کے ڈرائریکٹر سٹینلے کبرک کے ایک انٹرویو کو بھی ثبوت کے طور پر پیش کیا جا چکا ہے جس میں انہوں نے اعتراف کیا ہے کہ وہ ویڈیو جعلی تھی اور امریکی صدر جان ایف کینیڈی کے اصرار پر یہ ڈرامہ رچایا گیا۔ دوسری طرف امریکہ کے حقیقی مخالف چین نے ایک ایسا اعلان کر دیا ہے جس سے امریکی احساس کمتری میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ چین نے چاند کے زمین سے اوجھل چہرے سے نقاب اٹھانے کا اعلان کر دیا ہے۔ چینی خبررساں ایجنسی ڑن ہوا کی رپورٹ کے مطابق چین 2018ء میں چاند کے اس تاریک حصے پر لینڈنگ کے لیے اپنا مشن روانہ کرے گا جو کشش ثقل کی وجہ سے ہمیشہ زمین کی مخالف سمت میں رہا اور اسے آج تک کوئی بھی انسان نہیں دیکھ سکا۔چین اس سے قبل 1976ء میں اپنا مشن ’’چنگ ای 3‘‘ چاند کی سطح پر اتار چکا ہے جس میں خرگوش بھیجے گئے تھے۔ اس مشن میں چین کے خلائی راکٹ نے چاند کے اس تاریک حصے کا مشاہدہ بھی کیا تھا مگر آج تک اس تاریک حصے پر کوئی انسان نہیں اتر سکا۔ اب چین نئے مشن ’’چنگ ای 4‘‘ میں 2018ء میں چاند کے اس تاریک حصے پرجائے گا۔ چین کی سائنس، ٹیکنالوجی اینڈ ڈیفنس انڈسٹری کے سربراہ لیو جی ڑونگ کا کہنا تھا کہ ’’مشن ’’چنگ ای 4‘‘ چاند کے تاریک حصے کی ارضیاتی ساخت اور موسمی حالات کا جائزہ لے گا۔ ‘‘چین اپنے خلائی پروگرام کے حوالے سے بہت جذباتی ہے اور چینی صدر شی جن پنگ اس پروگرام کے ذریعے چین کی خلائی طاقت بڑھانے کا عندیہ دے چکے ہیں۔ چین کا کہنا ہے کہ اس کا خلائی پروگرام پرامن مقاصد کے لیے ہے مگر امریکہ چین کے خلائی پروگرام پر بھی بے چینی سے کروٹیں لے رہا ہے۔ امریکی محکمہ دفاع نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ چین اپنی خلائی طاقت اس لیے بڑھا رہا ہے تاکہ کسی بحران کی صورت میں اپنے مخالفین کو خلائی تنصیبات استعمال کرنے سے روک سکے۔

مزید :

صفحہ آخر -