وہ ایک چیز جو چین پاکستان میں دھڑا دھڑ لگارہا ہے، اپنے ملک میں اس پر پابندی لگادی

وہ ایک چیز جو چین پاکستان میں دھڑا دھڑ لگارہا ہے، اپنے ملک میں اس پر پابندی ...
وہ ایک چیز جو چین پاکستان میں دھڑا دھڑ لگارہا ہے، اپنے ملک میں اس پر پابندی لگادی

  

بیجنگ (نیوز ڈیسک) ہمارے ہاں کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے پاور پلانٹ دوست ملک چین کے تعاون سے دھڑا دھڑ لگائے جا رہے ہیں، اور حکومت انہیں اپنی فخریہ پیشکش قرار دے رہی ہے، مگر دوسری جانب چین نے خود ان پلانٹس سے نجات حاصل کرنے کا سلسلہ تیز تر کر دیا ہے۔

اخبار دی انڈیپینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق چین میں ماحولیاتی آلودگی کے سنگین ہوتے ہوئے مسئلے کے پیش نظر حکومت نے اگلے 5سالہ منصوبے کے تحت کوئلے کا استعمال1100GWتک محدود رکھنے کا فیصلہ کیا تھا، اور مجوزہ 85 نئے پاور پلانٹ لگانے کی صورت میں یہ حجم 1250GWتک پہنچ سکتا تھا۔ کوئلے کا استعمال محدود رکھنے کے لئے چینی حکومت نے مجوزہ تمام 85 کوئلے کے پاور پلانٹس کا منصوبہ ختم کردیا ہے۔

’امریکہ کی اس سازش کا ہم مل کر مقابلہ کریں گے‘ روس اور چین کے درمیان تاریخی معاہدہ ہوگیا، جان کر مغربی ممالک کے واقعی ہوش اُڑجائیںگے

رپورٹ کے مطابق چین، جو کہ دنیا کی سب سے بڑی انرجی مارکیٹ ہے، تیزی سے صاف ایندھن کی جانب منتقل ہورہا ہے۔ حکومت کی جانب سے تہیہ کیا گیا ہے کہ 2020ءتک صاف اور قابل تجدید توانائی کی پیداوار پر 2.5 کھرب یوان (تقریباً 36100ارب پاکستانی روپے) خرچ کئے جائیں گے۔ یہ رقم ہوا، پانی اور سورج کی توانائی سے بجلی بنانے کے منصوبوں کے لئے استعمال کی جائے گی، جبکہ 2020ءتک کل توانائی کا تقریباً نصف حصہ ایٹمی ذرائع سے حاصل کرنے کے منصوبے بھی لگائے جائیں گے۔

واضح رہے کہ چین اور امریکہ دنیا میں کاربن کے اخراج کی کل مقدار میں سے 38 فیصد کے ذمہ دار ہیں۔ دونوں نے گزشتہ سال پیرس میں طے پانے والے ماحولیاتی معاہدے پر دستخط کئے اور اس عزم کا اظہار کیا کہ آلودگی پید اکرنے والے ایندھن میں نمایاں کمی کی جائے گی۔

کاربن کے اخراج کو گلوبل وارمنگ کی سب سے بڑی وجوہات میں شمار کیا جاتا ہے، اور کوئلے کا بطور ایندھن استعمال کاربن کے اخراج کی سب سے بڑی وجہ قرار دیا جاتا ہے۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ ہمارے ہاں کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے پاور پلانٹس کا دور ایک ایسے وقت پر شروع ہو رہا ہے جب دنیا انہیں خیرباد کہہ رہی ہے۔

مزید : بین الاقوامی