گیس کی عدم بحالی، خانیوال میں خواتین کا دوسرے روز بھی احتجاج، گھیراؤ، پتھراؤ، افسران نے بھاگ کر جان بچائی

گیس کی عدم بحالی، خانیوال میں خواتین کا دوسرے روز بھی احتجاج، گھیراؤ، ...

خانیوال،وہاڑی،بٹہ کوٹ،بدھلہ سنت،صادق آباد(نمائندگان)سوئی گیس کی عدم بحالی اور لو پریشر کیخلاف خانیوال میں خواتین کا دوسرے روز بھی احتجاج،گھیراؤ اور پتھراؤ پر افسران نے بھاگ کر جان بچائی خواتین نے خالی برتن اٹھاکر احتجاجی مظاہرہ کیا دوسرے شہروں میں بھی بجلی گیس کی لوڈشیڈنگ جاری احمد پور لمہ میں واپڈا کیخلاف روڈ بلاک کرکے احتجاج کیا گیا اس سلسلے میں خانیوال سے ڈسٹرکٹ رپورٹر،نمائندہ پاکستان کے مطابق بلال محلہ طارق آباد کی سینکڑوں خواتین اور بچے گزشتہ روز سوئی گیس کی لوڈ شیڈنگ ،لو پریشر کے خلاف احتجاج کرنے سول لائن پہنچیں جہاں انہوں نے دفتر کا گھیراؤ کیا جس پر انچارج سوئی گیس مرزا مہتاب بیگ، انجینئر محمداکرم، اور دیگر افسر ان خواتین کے ساتھ موقع پر پہنچے اور تھانہ صدرکے باہر اسٹیشن پر سوئی گیس کا پریشر چیک کیا خواتین نے انہیں چاروں طرف سے گھیرے رکھا مگر جب افسران نے بتایا کہ پریشر ٹھیک ہے ہم اس سے زیادہ نہیں کرسکتے اور اسی مسئلے کو اوپر والے افسران حل کریں گے تو خواتین مشتعل ہوگئیں اور سوئی گیس ٹیم پر پتھراؤ شروع کردیا جس پر مرزا مہتاب بیگ، انجینئر اکرم اور دیگر نے موقع سے بھاگ کر گاڑی میں بیٹھ کر جان بچائی خواتین نے اس موقع پر کہا کہ جب تک گیس کا پریشر ٹھیک نہیں کریں گے انہیں دفتر میں نہیں بیٹھنے دیں گی انہوں نے یہ بھی اعلان کیا کہ اب وہ 18جنوری بروز بدھ صبح9بجے ڈنڈوں اور سوٹوں سمیت سوئی گیس کے دفتر پہنچیں گی ۔دریں اثناء تھانہ صدر کے سامنے گزشتہ روز درجنوں خواتین نے گیس کی لوڈ شیڈنگ کے خلاف خالی برتنوں کے ساتھ احتجاجی مظاہرہ کیا خواتین نے کہا کہ بچے صبح کو سکولوں میں غیر اعلانیہ گیس لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے ناشتہ کئے بغیر جاتے ہیں حکومت فوری طورپر غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ ختم کرنے کا اعلان کرے۔وہاڑی سے بیورو رپورٹ،نمائندہ خصوصی کے مطابق وہاڑی شہر اور گردونواح میں بد ترین لوڈشیڈنگ24گھنٹے میں کوئی وقت ایسا نہیں ہے کہ نا شتہ، دوپہر اور رات کا کھا نا پکایا جا سکے سوئی گیس کی بندش کی وجہ سے صبح کے اوقات میں گھریلو خواتین کوشدید مشکلات کا سا منا کرنا پڑتا ہے وہاڑی کے شہریوں علی جان ، غلام اللہ ، اقتدار حسین ودیگر نے بتایا کہ گیس کی لوڈشیڈنگ کی وجہ سے معمولات زندگی درہم برہم ہوکررہ گئے ہیں طلباء وطالبات کے علاوہ سرکاری وغیر سرکاری دفاتر کے ملا زمین نا شتہ کیے بغیر جا نے پر مجبور ہیں جبکہ دوپہر اور ات کا کھا نا بھی اکثر اوقات بازار سے خریدنا پڑتا ہے۔بٹہ کوٹ سے نمائندہ پاکستان کے مطابق حکو متی دعوے دھرے کے دھرے رہ گیء بجلی کی غیر اعلانیہ طویل لوڈ شیڈ نگ کا سلسلہ بدستور جاری ،نظام زندگی ٹھپ ہو کر رہ گیا ، چوروں کی مو جیں، تاجروں ،شہریوں کا غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کے خلاف شدید احتجاج، بلا تعطل بجلی کی ترسیل کا مطالبہ،گزشتہ کئی دنوں سے کبیروالا شہر اور نواحی علا قوں میں بجلی کی غیر اعلانیہ طویل لوڈنگ کا تکلیف دہ سلسلہ جاری ہے غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا ورا نیہ آٹھ سے دس گھنٹوں تک محیط ہو تا ہے بجلی سے بندش سے فیکٹریاں ،نجی کا رخا نے بند ہو نے کے قریب پہنچ چکے ہیں جس وجہ سے دیہا ڑی دار ،مزدور پیشہ طبقہ بری طرح متا ثر ہو رہا ہے ۔بدھلہ سنت سے نامہ نگار کے مطابق بدھلہ سنت اور اسکے گردونواح میں گیس کی لوڈشیڈنگ بڑھ گئی ہے جسکی وجہ سے امورخانہ کی خواتین ،صبح صبح ناشتہ بنانے والے کاروباری حضرات شدید پریشان ہیں اور صبح ناشتے اور شام میں کھانے کے وقت صرف گیس ہوتی ہے اور سارادن غائب رہتی ہے ۔صادق آباد سے تحصیل رپورٹر کے مطابق احمدپورلمہ کے علاقہ میں ایک ہفتے سے بجلی کی بندش اور بندش کے خلاف بچوں سمیت لوگوں کا شدید واپڈا کے خلاف احتجاج احمدپورلمہ میں ٹائروں کو آگ لگا کر روڈ بند کئے رکھا تفصیل کے مطابق احمدپورلمہ وارڈ نمبر 9 ہزاروں کی آبادی پر مشتمل ہے وہ ایک ہفتے سے ٹرانسفارمر جلنے کے بعد بجلی کی فراہمی معتل ہے جس سے گھروں مسجدوں سکولوں میں پانی کی قلت کی وجہ سے علاقہ مکین کو پریشانی کا سامنا واپڈا حکام کی بے حسی سے علاقہ مکین نے بچوں سمیت روڈ احمدپولمہ پر آ کر ٹائروں کو آ گ لگا کر واپڈا کے خلاف نعرہ بازی کی اور علاقہ مکینوں نے کہا کہ اگر بجلی فراہم نہ کی گئی تو آئیندہ بڑا احتجاج کریں گے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر