’’بلی تھیلے سے باہر آ گئی ‘‘روسی صدر ٹرمپ کی حمائیت میں اوباما انتظامیہ پر برس پڑے ،جنسی زیادتی کے الزامات پر ایسا جواب دے دیا کہ سن کر اوباما کے بھی کان لال ہو جائیں گے

’’بلی تھیلے سے باہر آ گئی ‘‘روسی صدر ٹرمپ کی حمائیت میں اوباما انتظامیہ پر ...
’’بلی تھیلے سے باہر آ گئی ‘‘روسی صدر ٹرمپ کی حمائیت میں اوباما انتظامیہ پر برس پڑے ،جنسی زیادتی کے الزامات پر ایسا جواب دے دیا کہ سن کر اوباما کے بھی کان لال ہو جائیں گے

  

ماسکو(ڈیلی پاکستان آن لائن) امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ حلف اٹھانے سے قبل ہی سنگین ترین الزامات کی ذد میں ہیں،آئے روز ایک نیا الزام اور ’’سنگین انکشاف ‘‘ ٹرمپ کی راہ تک رہا ہوتا ہے ،گوکہ نومنتخب امریکی صدر نے اپنے اوپر لگنے والے تمام الزامات کو مسترد کیا ہے لیکن اب روسی صدر ولادی میر پیوٹن  نے ٹرمپ کی حمائت میں میدان میں چھلانگ لگاتے ہوئے زور دار آواز بلند کی اور سبکدوش ہونے والی اوباما انتظامیہ پر الزام لگایا ہے کہ وہ نو منتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ پر جھوٹے الزام لگا کر انہیں نیچا دکھانے کی کوشش کر رہی ہے،ٹرمپ کے خلاف پیش کئے گئے دستاویزات اوباما انتظامیہ کی نو منتخب صدر ٹرمپ کی پوزیشن کو کمزور کرنے کی سمت میں کی جا رہی کوششوں کا حصہ ہیں،ٹرمپ پر جنسی نوعیت کے الزام لگانے والے ’’جسم فروش خواتین سے بدتر‘‘ ہیں۔روسی صدر نے  پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ کے خلاف پیش کئے گئے دستاویزات اوباما انتظامیہ کی نو منتخب صدر ٹرمپ کی پوزیشن کو کمزور کرنے کی سمت میں کی جا رہی کوششوں کا حصہ ہیں۔ ’ڈوزیئر‘ میں لگائے گئے ایک الزام کو   پیوٹن نے ’’جعلی‘‘ قرار دیا، جس میں کہا گیا ہے کہ 2013ء میں ماسکو کے ایک ہوٹل میں ٹرمپ جنسی نوعیت کی حرکات میں ملوث پائے گئے ۔

روسی صدر کا کہنا تھا کہ جن لوگوں نے ٹرمپ پر یہ الزام لگائے ہیں وہ ’’عصمت فروش خواتین سے بدتر‘‘ ہیں۔ولادی میر  پیوٹن نے کہا کہ گذشتہ ہفتے ایک غیرمصدقہ دستاویز جاری کی گئی جس میں ٹرمپ کے بارے میں فحش نوعیت کے الزامات لگائے گئے، جو امریکی صدر براک اوباما کی انتظامیہ کی جانب سے کی جانے والی ان کوششوں کا ایک حصہ ہے جن کا مقصد ’’منتخب صدر کی قانونی حیثیت کو دھچکا پہنچانا ہے‘‘، حالانکہ ٹرمپ نے صدارتی انتخاب ’’وثوق کے ساتھ‘‘ جیتا ہے۔ ’ڈوزیئر‘ میں لگائے گئے ایک الزام کو  پیوٹن نے ’’جعلی‘‘ قرار دیا، جس میں کہا گیا ہے کہ 2013ء میں ماسکو کے ایک ہوٹل میں ٹرمپ جنسی نوعیت کی حرکات میں ملوث پائے گئے۔پیوٹن نے مزید کہا کہ جن لوگوں نے یہ الزام لگائے ہیں وہ ’’عصمت فروش خواتین سے بدتر‘‘ ہیں، اور سوال کیا آیا ٹرمپ کو ’’طوائفوں کی ضرورت کیوں پڑے گی‘‘ جب کہ وہ ’’دنیا کی سب سے زیادہ خوبصورت خواتین کے ساتھ رہ چکے ہیں‘‘۔ ایسی من گھڑت خبریں جاری کرنے کا ذمہ دار ٹرمپ نے انٹیلی جنس برادری کو قرار دیا ہے، جس نے ٹرمپ پر روسی حکومت کے ساتھ رابطوں کا بھی الزام لگایا ہے، اور سوال کیا آیا اِس کے ذمہ دار سینٹرل انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر جان برینن ہیں؟۔

مزید : بین الاقوامی