فلم انڈسٹری میں خواتین کی مہم ’’ می ٹو‘‘ سے مرد خوفزدہ ہیں :ڈیانا کروگر

فلم انڈسٹری میں خواتین کی مہم ’’ می ٹو‘‘ سے مرد خوفزدہ ہیں :ڈیانا کروگر
 فلم انڈسٹری میں خواتین کی مہم ’’ می ٹو‘‘ سے مرد خوفزدہ ہیں :ڈیانا کروگر

  


لاس اینجلس( آن لائن )ہولی وڈ اداکارہ ڈیانا کروگر نے کہا ہے کہ فلم انڈسٹری میں خواتین کی جانب سے شروع کی گئی ’می ٹو‘ مہم سے طاقتور مرد ڈرے ہوئے ہیں۔ساتھ ہی اداکارہ نے اس خدشے کا بھی اظہار کیا کہ انہیں لگتا ہے کہ خواتین کی یہ مہم زیادہ دیر تک نہیں چلے گی۔خیال رہے کہ ہولی وڈ میں خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے خلاف اداکاراؤں نے گزشتہ تین ماہ سے ’می ٹو‘ نامی مہم چلا رکھی ہے، جسے اب ’ٹائمز اپ‘ نامی ایک تحریک میں بدل کر ان خواتین کو قانونی مدد فراہم کرنے کا سلسلہ شروع کرنے کا منصوبہ تیار کیا گیا ہے، جنہیں جنسی طور پر ہراساں کیا جاتا ہے۔اب تک ہولی وڈ کی 300 سے زائد اداکاراؤں سمیت بولی وڈ اور پاکستانی شوبز انڈسٹری کی خواتین بھی خود کے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں کے واقعات سامنے لا چکی ہیں۔اس مہم کو نہ صرف خواتین بلکہ دنیا بھر کے کئی مرد بھی سپورٹ کر رہے ہیں، ہولی وڈ کے مرد اداکار و پروڈیوسر بھی ’می ٹو‘ اور ’ٹائمز اپ‘ مہم میں خواتین کا ساتھ دینے کا اعلان کرچکے ہیں۔اسی مہم کے حوالے سے جرمنی نڑاد 41 سالہ ایوارڈ یافتہ اداکارہ ڈیانا کروگر نے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس مہم سے ہولی وڈ کے طاقتور مرد ڈرے ہوئے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اداکارہ نے ایک فرانسیسی ٹی وی چینل سے بات کے دوران اس بات کا انکشاف بھی کیا کہ انہیں آج تک اپنے مرد اداکار کے برابر معاوضہ نہیں دیا گیا۔ڈیانا کروگر کا کہنا تھا کہ ہولی وڈ میں یہ تبدیلی ہاروی وائنسٹن اسکینڈل کے بعد دیکھنے میں آرہی ہے، تاہم ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی تسلیم کیا کہ مکمل طور پر تبدیلی اس وقت ہی ممکن ہے، جب اس مہم میں مرد بھی خواتین کا ساتھ دیں گے۔

مزید : کلچر


loading...