وزیراعلیٰ کی نشتر ہسپتال آمد ‘ بروقت طبی امداد نہ ملنے پر مریض چل بسا

وزیراعلیٰ کی نشتر ہسپتال آمد ‘ بروقت طبی امداد نہ ملنے پر مریض چل بسا

  

ملتان(وقائع نگار)وزیر اعلی پنجاب کی نشتر ہسپتال آمد کے موقع سخت سیکورٹی اور پروٹوکول کے باعث مریض بروقت طبی امداد نہ ملنے کی وجہ سے دم توڑ گیا۔ مریضوں کے لئے بھی سیکیورٹی سخت کر کے داخلہ بند کر دیا گیا۔گردے کا مریض امیر بخش نشتر ایمرجنسی کے سامنے پلاٹ میں دم توڑ گیا۔(بقیہ نمبر21صفحہ12پر )

وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار اپنے استاد نذر عباس تونسوی کی عیادت کیلیے نشتر ہسپتال پہنچے تھے.نشتر انتظامیہ نے بھی مریضوں کو داخل نہ ہونے کے احکامات دے رکھے تھے۔ وزیر اعلی پنجاب کے استاد کے دن سے نشتر ہسپتال میں زیر علاج ہیں.وزیر اعلی پنجاب کے سیکیورٹی اہلکاروں کا مریضوں کے لواحقین سے جھگڑا بھی ہوا۔متوفی کے ورثا نے احتجاجی مظاہرہ بھی کیا۔مریض سارا دن علاج کے لئے دھکے کھاتے رہے۔وزیر اعلی پنجاب کی نشتر ہسپتال کی آمد پر آئی سی یو تک جانے والے راستے اور واڈز بند کر دئیے گئے ڈاکٹرز اور بزرگوں کو بھی دھکے دئیے گئے۔کئی لواحقین ادویات لے کر اپنے مریضوں تک نہ جا سکے۔اور وہ حکومت اور نشتر انتظامیہ کوستے رہے۔جو جہاں تھا وہ وزیر اعلی پنجاب کے جانے تک ویہی تک رہ کر محدود ہوگیا۔ وزیر اعلی پنجاب کے متوقع ملتان دورہ کے پیش نظر ضلع بھر کے تمام سرکاری ہسپتال ہائی الرٹ رہا ہے۔جبکہ نشتر ہسپتال سمیت آوٹ ڈور کا وقت ختم ہونے کے باوجود اسٹاف کو انتظامیہ نے زبردستی روک رکھا۔نرسیں و پیرا میڈیکس اور ڈاکٹرز کو ڈیوٹی سے نہ جانے کی ہدایت کی گئی۔مزید برآں وزیر اعلی پنجاب 14 گاڑیوں کے قافلے کے ساتھ نشتر ہسپتال پہنچے۔ان کا استقبال ایم ایس نشتر ہسپتال ڈاکٹر عاشق ملک نے کیا۔ وزیر اعلی پنجاب کی نشتر ہسپتال آمد کے موقع پر ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے ڈاکٹر نے تبدیلی مردہ آباد کے نعرے لگا دیے۔ وزیر اعلی پنجاب وائس چانسلر کے دفتر سے باہر نکلے تو ینگ ڈاکٹر خضر نے سیکیورٹی پروٹوکول اہلکاروں کے رویے کو دیکھتے ہوئے تبدیلی مردہ آباد کے نعرے لگائے۔

وزیراعلیٰ نشتر آمد

مزید :

ملتان صفحہ آخر -