’ جہانگیرترین،فواد چوہدری، پرویز الٰہی، شیخ رشید مشرف حکومت میں تھے اور آخری دنوں میں آٹے کا بحران پیدا ہوا، اب بھی وہی صورتحال ہے یعنی ۔۔۔ ‘

’ جہانگیرترین،فواد چوہدری، پرویز الٰہی، شیخ رشید مشرف حکومت میں تھے اور ...
’ جہانگیرترین،فواد چوہدری، پرویز الٰہی، شیخ رشید مشرف حکومت میں تھے اور آخری دنوں میں آٹے کا بحران پیدا ہوا، اب بھی وہی صورتحال ہے یعنی ۔۔۔ ‘

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان بھر میں اس وقت آٹے کا بحران پیدا ہوچکا ہے اور تندوروں پر روٹی کی قیمت میں اضافہ کردیا گیا ہے، حکومت کی جانب سے یہ تسلیم نہیں کیا جارہا کہ ملک میں آٹے کا بحران موجود ہے بلکہ اسے مصنوعی قرار دیا جارہا ہے، اسی صورتحال پر سینئر صحافی رضوان رضی (رضی دادا) نے ایسی بات کہہ دی کہ پی ٹی آئی کارکنوں کی پریشانی کی حد نہ رہے۔

رضوان الرحمان رضی نے فیس بک پر سوالیہ انداز میں ایک پوسٹ کی ، انہوں نے سول پوچھا ’کیا جہانگیر ترین، فواد چوہدری، پرویز الٰہی، شیخ رشیدوغیرہ جات جنرل مشرف کی حکومت کا حصہ تھے؟

جی ہاں تھے۔

توکیاپرویزی حکومت کے آخری ایام میں آٹے کابحران پیدا ہواتھا؟

جی ہاں ہوا تھا۔

تے سمجھ جاو فیر‘

ایک اور پوسٹ میں رضی دادا نے نشاندہی کی کہ گندم کی گزشتہ سال کی فصل کو گولڈ رسٹ نامی بیماری لگی جس کے باعث گندم کی پیداوار 12 فیصد تک کم رہی۔ اس بیماری کا سب سے زیادہ حملہ بزدارکے اپنے حلقے میں ہوا لیکن پھر بھی اگلی فصل کے لئے جو کاشت بھی ہو چکی اس بیماری کی روک تھام کےلئے کچھ نہیں کیاگیا۔ اس کے ذمہ دار عمران خان بذریعہ وسیم اکرم پلس ہیں۔

انہوں نے اس صورتحال پر پنجابی زبان میں تبصرہ کرتے ہوئے لکھا بوٹا تے گالاں ای کڈ سکدا اے، سردی نال ہتھ ٹھرے پئے نیں، لتر پولا ہو نئیں سکدا (بوٹا تو گالیاں ہی دے سکتا ہے، سردی کی وجہ سے ہاتھ ٹھٹھر رہے ہیں اس لیے چھترول نہیں کی جاسکتی)

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور