کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں میں سے کتنے فیصد کی پانچ ماہ میں موت ہوجاتی ہے؟ پریشان کن اعداد و شمار سامنے آگئے

کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں میں سے کتنے فیصد کی پانچ ماہ میں موت ...
کورونا وائرس سے صحت یاب ہونے والوں میں سے کتنے فیصد کی پانچ ماہ میں موت ہوجاتی ہے؟ پریشان کن اعداد و شمار سامنے آگئے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کی وباءکے دوران ہرملک میں اس مرض میں مبتلا ہو کرصحت یاب ہونے اور موت کے منہ میں جانے والے لوگوں کی ایک شرح بتائی جاتی رہی جو کافی حوصلہ افزاءہوتی مگر اب سائنسدانوں نے نئی تحقیق میں صحت یاب ہونے والے مریضوں کے متعلق ایسا ہولناک انکشاف کر دیا ہے کہ وباءکی ہلاکت خیزی پر انسان دہل کر رہ جائے۔ میل آن لائن کے مطابق اس نئی تحقیق میں معلوم ہو ا ہے کہ کورونا وائرس کے جو مریض ہسپتال میں داخل رہے اور پھر صحت مند ہو کر گھر واپس چلے گئے،ان میں ہر 8میں سے ایک شخص کی صحت مند ہونے کے صرف 140دن کے اندر موت واقع ہوگئی۔ 

اس کے علاوہ صحت مند ہونے والے مریضوں میں سے ایک تہائی لوگوں کو چند ہفتوں کے اندر ہی دوبارہ ہسپتال لانا پڑا۔ یہی اس موذی وباءکے انتہائی سنگین نقصانات تھے جن کی وجہ سے صحت مندی کے بعد یہ لوگ صحت مند نہ ہو سکے اور اندرونی اعضاءکوپہنچنے والے شدید نقصان کے باعث ہفتوں کے اندر دوبارہ ہسپتال پہنچ کر موت کے منہ میں جاتے رہے۔ اس موذی وباءکے یہ سنگین طویل مدتی نقصانات لیسیسٹر یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے اپنی تحقیق میں بتائے ہیں۔ تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر کملیش کھنتی کاکہناتھا کہ ”کورونا وائرس کے صحت مند ہونے والے اکثر مریضوں کی دل کی صحت اس وائرس کی وجہ سے متاثر ہوئی اور یہ صحت مندی کے بعد ان کی موت ہونے کا سب بڑا سبب تھا۔“

مزید :

کورونا وائرس -