یونان میں تارکین پر تشدد کے واقعات، یورپین کمیشن نے نوٹس لے

یونان میں تارکین پر تشدد کے واقعات، یورپین کمیشن نے نوٹس لے

  

 ایتھنز (جی این آئی) یونان میں تارکین وطن کو تشددکا نشانہ بنائے جانے کے واقعات کے بعد یورپین کمیشن کے ہیومن رائٹس ادارے نے نوٹس لیا ہے اور تارکین وطن پر ہونے والے تشدد کے واقعات پرتشویش کا اظہارکرتے ہوئے ہیومن رائٹس کمیشن کونسل آف یورپ کے کمشنر نلس موزینکس نے ایتھنز کاجلد دورہ کرنے کاعندیہ دیاہے یورپی کمشنر اپنے دورہ کے دوران تارکین وطن پرتشدد کے واقعات کے محرکات، نسل پرستی کے خاتمے اور دیگر امور پر حکومتی عہدیداران سے ملاقاتوں پر بات کریں گے، یونان میں یونانی انتہا پسند تنظیم خریسی اووگی جوکہ نیو نازی نظریات کی حامل ہے کی جانب سے تارکین وطن خصوصا پاکستانیوں کو زبردست تشدد کانشانہ بنایا گیا ہے اور ان کو کاروبار بند کرکے یونان سے نکل جانے کی دھمکیاں بھی دی جس کا نوٹس لیا گیا اور عالمی اداروں جن میں ایمنسٹی انٹرنیشنل، ہیومن رائٹس واچ، یونانی ادارہ محتسب، یونانی انسانی حقوق کی تنظیموں، جنگ مخالف ونسل پرستی کی مخالف جماعتوں سمیت تارکین وطن کی تنظیموں خصوصا پاکستانی برادری کی تنظیموں نے آواز بلند کی اور ان واقعات کی روک تھام کا مطالبہ کیا? نیونازی نظریات کی حامل سیاسی جماعت خریسی اووگی کے غنڈوں کی جانب سے اس وقت پر تشدد کارروائیوں کے واقعات میں اضافہ ہوا جب ان کویونانی انتخابات میں 6 مئی کے انتخابات میں 21 اور بعد ازاں 17 جون کے انتخابات میں18 نشستیں حاصل ہوئیں ۔پہلی دفعہ پارلیمنٹ میں جانے کے بعد ان کے حوصلے بلند ہوئے جبکہ سب سے اہم نکتہ یہ ہے کہ یونانی پولیس کے 50 فی صد اہلکاروں نے بھی اسی جماعت کو ووٹ دے کر درپردہ حمایت کا اشارہ دیا تھا اور تارکین وطن کی شکایات پر ان کے مقدمات کے اندراج نہ کرنے قانونی موشگافیوں کاسہارا لے کر ان کو قانونی معاونت سے محروم کرنے کی وجہ سے بھی انتہا پسند جماعت کو تارکین وطن پر تشدد کے مواقع اورحوصلہ ملا ۔

مزید :

عالمی منظر -