حکومت منشیات کی روک تھام کے لئے کچھ نہیں کر رہی،،میاں مقصود

حکومت منشیات کی روک تھام کے لئے کچھ نہیں کر رہی،،میاں مقصود

لاہور (نمائندہ خصوصی )امیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے پاکستان میں منشیات کی خریدوفروخت اور اس کے استعمال میں روز افزوں اضافے پر تشویش کا اظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ پاکستان میں منشیات کاگھناؤنا کاروبار80ء کے عشرے کے ابتدائی سالوں میں شروع ہوکر ہنوز جاری ہے اور میڈیا کی رپورٹس کے مطابق ملک میں منشیات کے عادی افراد کی تعداد نصف کروڑ سے زائد ہوچکی ہے جوکہ انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت امر ہے۔ حکومت اس کی روک تھام کے لئے کچھ نہیں کر رہی ۔ انہوں نے کہ نوجوان نسل سب سے زیادہ مذموم عزائم کے تحت شروع کیے جانے والے کاروبار سے متاثر ہیں۔اگر حکومت نے اس حوالے سے کچھ نہ کیاتوپاکستان کامستقبل غیر محفوظ ہوجائے گا۔ اقوام متحدہ کے ادارے ’’انٹرنیشنل نارکوٹکس کنٹرول بورڈ‘‘کی جانب سے منشیات کے حوالے سے پاکستان کے خلاف چارج شیٹ لمحہ فکریہ ہے۔چارج شیٹ اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ حکومت پاکستان ملک میں منشیات کی روک تھام میں بری طرح ناکام ہوچکی ہے۔ڈرگ ریگولٹری اتھارٹی اور انسدادمنشیات کے اداروں کے درمیان اشتراک عمل کوفروغ دینے کی ضرورت ہے تاکہ ملک کو منشیات سے پاک کیا جاسکے۔ میاں مقصوداحمد نے مزیدکہاکہ حکومت کوچاہئے کہ وہ ملک میں بے روزگار افراد کیلئے نئے روزگار کے مواقع پیداکرے۔چند روپوں کی لالچ میں گھناؤناکام کرنے والوں کے خلاف بغیر کسی دباؤکے کاروائی کی جائے اور ایسے عناصر کاقلع قمع یقینی بنایاجائے تاکہ ملک میں منشیات فروشوں کے نیٹ ورک کومکمل طور پرختم کیاجاسکے۔ گھناؤنے دھندے کے باعث نوجوان نسل تباہ ہو رہی ہے ۔ حکومت پاکستان کو اس کا سختی سے نوٹس لینا چاہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...