ادویات کی قیمتوں میں 2.68فیصد تک اضافے کی منظوری باعث تشویش ہے،بلال شیرازی

ادویات کی قیمتوں میں 2.68فیصد تک اضافے کی منظوری باعث تشویش ہے،بلال شیرازی

لاہور(خبرنگار) پاکستان مسلم لیگ ق کے رہنما و مسلم لیگ یوتھ ونگ کے مرکزی صدر سید بلال مصطفی شیرازی نے ڈرگ پرائس کمیٹی کی جانب سے ڈرگ پالیسی2015کے تحت رواں مالی سال کیلئے 70ہزار ادویات کی قیمتوں میں 2.68فیصد تک اضافے کی منظوری پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ادویات کی قیمتوں میں اضافہ سے غریب و سفید پوش مریض کو اپنے علاج معالجہ میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا انہوں نے کہا کہ مذکورہ فیصلہ کے تحت فارماسوٹیکل کمپنیوں کو رجسٹرڈ70ہزار ادویہ کی قیمتوں میں کنزیومر پرائس انڈیکس کے تحت شیڈول ادویہ 50فیصد اور نان شیڈول ادویہ کی70فیصد قیمت بڑھانے کی اجازت دی گئی ہے جو مریضوں کے استحصال کے مترادف ہے سید بلال مصطفی شیرازی نے کہا کہ حکومت ٹرانسپورٹ میٹروبس،میٹروٹرین پر سبسڈی دینے کے ساتھ ساتھ عوام کی فلاح و بہبود کیلئے علاج معالجہ کیلئے ادویات کی قیمتیں کم کرنے کیلئے بھی سبسڈی استعمال کرے ۔انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں میں مریض مفت ادویات کی فراہمی سے محروم ہیں پچھلے سال کے بجٹ میں 2ارب ادویات کی فراہمی کیلئے مختص رقم میں سے خرچ ہی نہیں کیے گئے اور اسے میٹروٹرین و دیگر منصوبوں میں استعمال کیا گیا جو افسوسناک پہلو ہے،انہوں نے کہا کہ ادویات کی قیمتوں میں اضافہ نہیں بلکہ کمی کی جائے تاکہ مریضوں کو علاج معالجہ میں آسانی ہوانہوں نے کہا کہ ملٹی نیشنل کمپنیوں کی قیمتیں پاکستان میں زیادہ جبکہ ہمسائیہ ممالک میں کم ہیں ،ادویات کی قیمتوں میں اضافہ سے قبل ان کا ہمسائیہ ممالک کی قیمتوں سے موازنہ کیا جائے تاکہ عوام کو مالی استحصال سے بچایا جاسکے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1