بہتر منصوبہ بندی اور منصفانہ پالیسی سے گیس کا ضیاع مکمل طور پر رک گیا ہے: ایم ڈی سوئی ناردن

بہتر منصوبہ بندی اور منصفانہ پالیسی سے گیس کا ضیاع مکمل طور پر رک گیا ہے: ایم ...
بہتر منصوبہ بندی اور منصفانہ پالیسی سے گیس کا ضیاع مکمل طور پر رک گیا ہے: ایم ڈی سوئی ناردن

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور( لیاقت کھرل) ایم ڈی سوئی ناردرن گیس کمپنی امجد لطیف نے کہا ہے کہ گیس ذخائر کے استعمال میں منصفانہ تقسیم سمیت بہتر منصوبہ بندی سے غیر ذخائر کے بلا وجہ ضیاع سے گیس ذخائر میں خاصی بچت ،گیس چوری کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن سے یو ایف جی کی شرح میں کمی واقع ہوئی ہے اور گیس کمپنی کے شیئرز کی قیمتیں100 فیصد بڑھی ہیں جبکہ پرانے نیٹ ورک کی مرحلہ وار اَپ گریڈیشن اور بوسیدہ و پرانی لائنوں کی تبدیلی سے لائن لاسز میں کمی واقع ہوئی ہے اس سے یو ایف جی کی شرح میں 2 فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔پہلی مرتبہ گیس کمپنی اپنے پاؤں پر کھڑی ہوئی ہے ،خسارے سے پاک اور ایک منافع بخش کمپنی میں تبدیل ہونے لگی ہے۔ اس حوالے سے ایم ڈی امجد لطیف نے ’’پاکستان‘‘ کو بتایا کہ سوئی گیس کمپنی کے ذخائر کی تقسیم میں بہتر منصوبہ بندی کی گئی ہے جس سے گیس ذخائر کا بلاوجہ ضیاع مکمل طور پر رک گیا ہے اس میں گیس ذخائر کی تقسیم میں منصفانہ پالیسی کو بنیادی فلسفہ بنایا گیا ہے جس سے گذشتہ چند ماہ کے دوان بالخصوص ان کی تعیناتی سے اب تک گیس ذخائر کی ہر ماہ خاصی بچت ہو رہی ہے اور ہے بچ جانے والی گیس گھریلو صارفین سمیت دیگر سیکٹرز کو فراہم کی جارہی ہے جس سے گیس کی لوڈشیڈنگ اور بعض سیکٹرز کو گیس کی فراہمی نہ ہونے کی شکایات مکمل طور پر ختم ہو کر رہ گئی ہیں جبکہ اس کے ساتھ گیس بحران پر بھی قابو پانے میں مدد ملی ہے ایم ڈی نے مزید بتایا کہ گیس چوروں کے خلاف بلا امتیاز آپریشن کو و احد ایجنڈا قرار دیا گیا ہے جس سے گیس چوروں کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن کو جاری رکھا گیا ہے اس کے باعث کمپنی خسارے سے نکل پڑی ہے اور کئی سالوں سے خسارے کا شکار گیس اپنے پاؤں پر کھڑی ہو گئی ہے ایم ڈی نے مزید کہا کہ گیس کمپنی کو انشاء اللہ ایک منافع بخش ادارہ بنا کر دم لوں گا۔ اس سلسلہ میں گیس کمپنی کے تمام اعلیٰ افسران، ملازمین اور ان کی ٹیم میں شامل صرف اس واحد ایجنڈے پر عمل پیرا ہیں اور اس میں 50 سے 60 فیصد کامیابی ہوئی ہے، جس میں گیس چوروں کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈاؤن سے گیس چوری پر 70 سے 80 فیصد قابو پا لیا گیا ہے۔ اسی طرح پرانے نیٹ ورک کی مرحلہ وار اپ گریڈیشن اور سپلائی لائنوں کو تبدیل کرنے سے ضائع ہونے والی ماہانہ 300 ملین کیوبک فٹ گیس کی بچت ہوئی جو کہ گھریلو صارفین کو سپلائی کی جارہی ہے جس سے گیس بحران پر قابو پانے میں مدد ملی ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ یہ پہلا سال ہے کہ گھریلو صارفین ، کمرشل ، صنعتوں سمیت تمام سیکٹر زکو بلاتعطل گیس فراہم کی جا رہی ہے اور گھریلو سیکٹرز سمیت تمام سیکٹرز گیس کی لوڈشیڈنگ ختم کر دی گئی ہے۔ جبکہ اس کے ساتھ ساتھ لائن لاسز اور یو ایف جی کی شرح میں دو فیصد کمی بھی واقع ہوئی ہے،اس کے علاوہ مزید بہتر منصوبہ بندی سے گیس کمپنی کے شیئرز کی قیمتوں میں 100فیصد اضافہ ہو اہے جو کہ گیس کمپنی کی تاریخ میں ایک بہت بڑی ایک زندہ مثال ہے۔ جس سے گیس کمپنی خسارے سے پاک ہو رہی ہے اور تاریخ میں پہلی مرتبہ ایک منافع بخش اور خسارے سے پاک ادارے میں تبدیل ہو رہی ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ گیس کمپنی کو اپنے پاؤں پر کھڑاکرنے اورخسارے سے مکمل پاک بنانے کے لئے کی گئی منصوبہ بندی اور حکمت عملی پر عمل کروایا جائے گا اور منافع بخش ادارہ بنانے کے لئے انشاء اللہ رواں مالی سال میں گیس چوری کا مکمل خاتمہ اور گیس کمپنی کو ایک منافع بخش ادارہ بن کر دم لوں گا۔

ایم ڈی سوئی گیس

مزید : صفحہ آخر