گندم، آٹے کی بر آمد پر پابندی، در آمدی کھاد کی قیمت 1800روپے فی بوری مقرر

گندم، آٹے کی بر آمد پر پابندی، در آمدی کھاد کی قیمت 1800روپے فی بوری مقرر

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر،نیوز ایجنسیاں) اقتصادی رابطہ کمیٹی نے گندم اورآٹے کی برآمد پر پابندی عائد کردی۔تفصیلات کے مطابق مشیر خزانہ حفیظ شیخ کی زیرصدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا، جس میں ملک کی معاشی صورتحال کا جائزہ لیاگیا، ملک میں آٹے کی قیمتوں کے استحکام اور وافر دستیابی کو یقینی بنانے کیلئے فیصلہ کرتے ہوئے گندم اورآٹے کی برآمد پر پابندی عائد کردی گئی۔ پابندی لاگو ہونے کے بعد افغانستان کو بھی آٹے کی ترسیل بند کر دی گئی ہے،دوسری جانب اسی سی سی نے غیرممنوعہ ایلومینیم اسکریپ کی درآمد کی اجازت دیدی۔ اجلاس میں درآمدی کھاد کی قیمت 1800 روپے فی بوری مقرر، رواں مالی سال کیلئے تمباکو کی کم ازکم امدادی قیمت مقررکرنے سمیت سپو ر ٹس یوٹیلٹی وہیکلز کی درآمد پر11 فیصد ایڈیشنل کسٹمز ڈیوٹی عائد کرنے کی منظوری بھی دی گئی۔واضح رہے پنجاب حکومت نے بھی وفاق کو ایکسپورٹ پرپابندی کی سفارش کی تھی۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی نے روٹی اور نان کی قیمت میں اضافہ کی روک تھام کیلئے فوری اقدامات کی بھی ہدایت کی،اجلاس میں بوئنگ طیاروں کے آئی ایف سی سسٹم کیلئے پی آئی اے کی سمری بھی منظو ر کرلی گئی۔ذرائع کے مطابق اقتصادی رابطہ کمیٹی نے گندم کی برآمد پر پابندی آٹے کی قیمت میں اضافے کے باعث لگائی ہے۔ اجلاس میں سال 20-2019کیلئے تمباکو کی کم از کم قیمت کا تعین بھی کر دیا گیا۔اجلاس میں بوئنگ طیاروں کے آئی ایف سی سسٹم کیلئے پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائن(پی آئی اے)کی سمری بھی منظور کرلی گئی۔ پی آئی اے کو دستیاب وسائل سے 70کروڑ روپے خرچ کرنے کی ہدایت کردی گئی۔اجلاس میں شماریات کیلئے قیمتوں کے تعین میں بیس ایئر 16-2015 مقرر کرنے کی بھی منظوری دی گئی، ا قتصا د ی رابطہ کمیٹی کو ملک میں مہنگائی پر بھی بریفنگ دی گئی۔ اجلاس میں صوبہ خیبر پختونخوا کے علاقے ہنگو کے مختلف دیہاتوں میں گیس فراہمی کی سمر ی پر بھی غور کیا گیا۔

گندم آٹا پابندی 

مزید : صفحہ اول


loading...