امریکہ، بھارت میں ریکارڈ کوروناکیس، پاکستان میں مزید 49افراد جان کی بازی ہار گئے سمارٹ لاک ڈاؤن سے کیسز،ہلاکتیں کم ہوئیں، عید سادگی سے منائیں، احتیاطی تدابیر اختیار کی جائیں: عمرا ن خان

        امریکہ، بھارت میں ریکارڈ کوروناکیس، پاکستان میں مزید 49افراد جان کی ...

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)اب تک پنجاب میں 2059، سندھ میں 1952 اور خیبر پختونخوا میں 1130 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جب کہ اسلام آباد میں 157، بلوچستان میں 131، آزاد کشمیر میں 46 اور گلگت بلتستان میں 39 افراد کا انتقال ہوا ہے۔ملک بھر سے کورونا کے مزید 1971 کیسز اور 49 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن میں سندھ 1170 کیسز 30 ہلاکتیں، پنجاب 484 کیسز 8 ہلاکتیں، خیبر پختونخوا سے 183 کیسز اور 6 اموات، بلوچستان سے 20 کیسز اور 3 ہلاکتیں، اسلام آباد 52 کیسز ایک ہلاکت، گلگت 25 کیسز ایک ہلاکت اور کشمیر سے 37 کیسز سامنے آئے ہیں۔پنجاب سے کورونا کے 484کیسز اور 8 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جن کی تصدیق پی ڈی ایم اے کی جانب سے کی گئی ہے۔صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق پنجاب میں کورونا کے مریضوں کی کْل تعداد 89023 اور ہلاکتیں 2059ہوچکی ہیں۔پی ڈی ایم اے کے مطابق پنجاب میں اب تک کورونا کے 64815 مریض صحتیاب بھی ہوچکے ہیں۔جمعے کو سندھ میں مزید 1170 کیسز اور 30 ہلاکتیں سامنے آئی ہیں جس کے بعد صوبے میں کورونا کیسز کی کل تعداد 111238 ہوگئی ہے جب کہ ہلاکتیں 1952 تک جا پہنچی ہیں۔اس کے علاوہ صوبے میں اب تک 88103 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں۔وفاقی دارالحکومت سیکورونا کے مزید 52 کیسز اور ایک ہلاکت سامنے آئی ہے جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ کی گئی ہے۔پورٹل کے مطابق اسلام آباد میں کورونا کے مریضوں کی کل تعداد 14454 اور ہلاکتیں 157 ہوگئی ہیں۔اس کے علاوہ شہر میں کورونا سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 11599ہوگئی ہے۔گلگت بلتستان سیکورونا کے مزید 25 کیسز اور ایک ہلاکت سامنے آئی ہے جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ کی گئی ہیں۔پورٹل کے مطابق گلگت میں کورونا کے مریضوں کی کل تعداد 1775 ہوگئی ہے جب کہ وہاں اموات کی تعداد 39 ہے۔گلگت میں کورونا سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 1396 ہے۔آزاد کشمیر سے کورونا کے مزید 37کیسز سامنے آئے ہیں۔آزاد کشمیر میں اب تک مجموعی طور پر 1808 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوچکی ہے جب کہ وہاں اموات کی تعداد 46 ہوگئی ہے۔جمعے کو بلوچستان سے کورونا کے مزید 20 کیسز اور 3 ہلاکتیں سامنے آئیں۔ صوبے میں متاثرہ مریضوں کی تعداد 11405 اور ہلاکتیں 131 ہوگئی ہیں۔ اس کے علاوہ بلوچستان میں اب تک کورونا سے 8313 مریض صحتیاب بھی ہوچکے ہیں۔خیبرپختونخوا میں جمعے کو کورونا وائرس کے باعث مزید 6 افراد انتقال کرگئے جس کے بعد صوبے میں ہلاکتوں کی تعداد 1130 ہوگئی

کورونا ہلاکتیں

نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)بھارت میں کورونا کیسز کی تعداد 10 لاکھ سے تجاوز کرگئی جس کے بعد بھارت کورونا کے سب سے زیادہ کیسز والا دنیا کا تیسرا ملک بن گیا ہے۔بھارتی میڈیا کے مطابق وزارت صحت کا بتانا ہے کہ گزشتہ روز ملک میں کورونا کے اب تک ایک روز میں سب سے زیادہ کیسز اور ہلاکتیں رپورٹ ہوئیں جن میں 34956 نئے مریض سامنے آئے جب کہ 687 افراد ہلاک ہوگئے جس کے بعد ملک میں کورونا کے کیسز 10 لاکھ 3 ہزار سے تجاوز کرگئے اور ہلاکتیں 25 ہزار 600 سے بڑھ گئی ہیں۔بھارتی وزارت صحت کے مطابق ملک بھر میں 6 لاکھ 35 ہزار سے زائد کورونا کے مریض صحتیاب بھی ہوئے ہیں جس کے بعد صحتیاب ہونے والے مریضوں کی شرح 63 فیصد ہوگئی ہے۔بھارتی میڈیا کے مطابق کورونا کے کیسز میں تیزی سے اضافے کے بعد کچھ علاقوں میں دوبارہ لاک ڈاؤن نافذ کردیا گیا ہے۔بھارتی میڈیا کا بتانا ہے کہ ملک بھر میں ریاست مہاراشٹرا میں سب سے زیادہ کیسز ہیں جس کے بعد تامل ناڈو، نئی دہلی، کرناٹکا، گجرات، اترپردیش اور تلنگانا میں مریضوں کی تعداد زیادہ ہے۔بھارت میں کورونا مریضوں کی تعداد 10 لاکھ سے تجاوز کرنے کے بعد بھارت دنیا میں کورونا کے سب سے زیادہ کیسز والا تیسرا ملک بن گیا ہے جب کہ امریکا 36 لاکھ کیسز کے ساتھ پہلے اور برازیل 20 کیسز کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے۔پوری دنیا میں نوول کرونا وائرس کے مصدقہ کیسز کی تعداد1کروڑ 38 لاکھ 5ہزار296تک پہنچ گئی ہے۔امریکہ35 لاکھ76ہزار157مصدقہ کیسز کے ساتھ سرفہرست ہے جبکہ برازیل 20 لاکھ12ہزار151مصدقہ کیسز کیساتھ دوسرے، بھارت 10لاکھ 3ہزار832مصدقہ کیسز کے ساتھ تیسرے نمبر پر ہے۔روس میں 7لاکھ51ہزار612مصدقہ کیسز ہیں، پیرو میں مصدقہ کیسز کی تعداد 3لاکھ 41 ہزار586ہوگئی ہے، اسی طرح جنوبی افریقہ میں مصدقہ کیسز کی تعداد 3لاکھ 24ہزار221، میکسیکو میں 3لاکھ24ہزار41 اور چلی میں مصدقہ کیسز کی تعداد 3لاکھ23ہزار698 تک پہنچ گئی ہے۔برطانیہ میں مصدقہ کیسز کی تعداد2لاکھ 94ہزار116جبکہ چین میں 85ہزار765 ہوگئی ہے۔مریکا میں کورونا وبا پر قابو نہ پایا جاسکا، ایک ہی روز میں تقریبا 70 ہزار کیسز سامنے آگئے جو نیا ریکارڈ ہے۔ ایک ماہ میں یہ گیارہواں موقع ہے کہ کورونا کیسز کی تعداد کا نیا ریکارڈ قائم ہوا ہے۔امریکی میڈیارپورٹس کے مطابق وبا کے سبب امریکا میں ایک کے بعد دوسری ریاست میں ماسک پہننا لازم قرار دیا جارہا ہے۔ امریکا کے سن بیلٹ اسپتالوں میں سب سے زیادہ مریض لائے جارہے ہیں۔ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ اسپتال اور طبی مراکز میں سہولتیں کم پڑجائیں گی۔امریکی میڈیا کا دعوی ہے کہ وائٹ ہاوس کی ایک رپورٹ منظر عام پر نہیں لائی گئی جس میں زور دیا گیا ہے کہ کورونا سے سب سے زیادہ متاثر ریاستوں میں سخت اقدامات کیے جائیں۔

بھارت، امریکہ

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)وزیراعظم عمران خان نے عیدالاضحی کے موقع پر عید الفطر جیسی صورتحال سے بچنے کیلئے اسٹینڈرڈ آپریٹنگ پروسیجرز (ایس او پیز) پر سختی سے عملدرآمد کروانے حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ ملک میں کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کی تعداد اور اموات کی شرح میں کمی عوام کے حکومتی ہدایات پر عمل کرنے کا نتیجہ ہیں۔جمعہ کو سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک بیان میں وزیراعظم نے کہا کہ ہمارے بدقسمت ہمسائے ملک بھارت کے مقابلے پاکستان ان خوش قسمت ممالک میں شامل ہے جہاں ہسپتالوں بالخصوص انتہائی نگہداشت کے شعبہ جات میں کورونا سے متاثرہ مریضوں کی تعداد اور شرحِ اموات کم ہوئی ہیں۔وزیراعظم نے صوتحال میں اس بہتری کی وجہ حکومت کی جانب سے جزوی بندشوں کی حکمت عملی اپنانے اور عوام کی جانب سے حکومت کی تجویزکردہ حفاظتی تدابیر پر عمل کرنے کو قرار دیا۔ انہوں نے قوم سے اپیل کی کہ وبا کی صورتحال میں اس مثبت رجحان کو جاری رکھنے کے لیے حفاظتی تدابیر پر عملدرآمد جاری رکھا جائے۔وزیراعظم نے کہا کہ عیدالاضحی کے موقع پر سادگی اپنائی جائے تاکہ عیدالفطر کے موقع پر پیدا ہونے والی صورتحال دوبارہ درپیش نہ ہو کہ ایس اوپیز پر عمل نہ کرنے کے نتیجے میں ہسپتال مریضوں سے بھر گئے تھے۔انہوں نے اعلان کیا کہ میں ایس او پیز کے سخت نفاذ کے احکامات صادر کررہا ہوں۔وزیر اعظم عمران خان نے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے حوالے سے انتظامات اور پیش رفت پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا کے کسی بھی کونے میں رہنے والا پاکستانی ہماری ذمہ داری ہے اور اس ذمہ داری کو پورا کرنے کے حوالے سے ہر کوشش کرتے رہیں گے۔ جمعہ کو وزیر اعظم عمران خان سے معاون خصوصی برائے نیشنل سیکورٹی ڈاکٹر معید یوسف نے ملاقات کی جس میں علاقائی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ڈاکٹر معید یوسف نے کورونا کے تناظر میں بیرون ممالک پھنسے ہوئے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے حوالے سے پیش رفت پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ اب تک دنیا بھر میں 70 ملکوں سے دو لاکھ پچیس ہزار سے زائد پاکستانیوں کو وطن واپس لایا جا چکا ہے۔ انہوں نے کہا مشکل کی گھڑی میں بیرون ملک پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے وزیر اعظم کے وعدے کو پورا کیا جا چکا ہے۔وزیر اعظم نے پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے حوالے سے انتظامات اور پیش رفت پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دنیا کے کسی بھی کونے میں رہنے والا پاکستانی ہماری ذمہ داری ہے اور اس ذمہ داری کو پورا کرنے کے حوالے سے ہر کوشش کرتے رہیں گے۔زیر اعظم عمران خان نے کہا کہ 10 ارب درخت اگانے کا فیصلہ کیا تھا، 2 برس میں 30 کروڑ درخت اگائے ہیں، ہماری نرسریوں میں پودے تیار ہیں اور آئندہ جون تک ایک ارب درخت اگا چکیں گے،بدقسمتی سے پاکستان ان ممالک کی فہرست میں آتاہے جہاں سب سے کم جنگلات بچے ہیں،9 نئے نیشنل پارکس ڈکلیئر کردیے ہیں، نیشنل پارکس جنگلات کو بھی تحفظ فراہم کرتے ہیں،تدریسی اداروں میں ہفتے میں دو گھنٹے بچوں کو شجر کاری سے متعلق آگاہی کیلئے وقف کیے جائیں گے، نرسریوں میں پودوں کی افزائش کا سلسلہ جاری ہے اور اگلے 5 برس میں بتدریج اپنے مقصد میں کامیاب ہوجائیں گے۔کہوٹہ میں وزیراعظم عمران خان نے مون سون شجر کاری مہم کا افتتاح کرتے ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے پاکستان ان ممالک کی فہرست میں آتاہے جہاں سب سے کم جنگلات بچے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم نے 9 نئے نیشنل پارکس ڈکلیئر کردیے ہیں، نیشنل پارکس جنگلات کو بھی تحفظ فراہم کرتے ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ نرسریوں میں پودوں کی افزائش کا سلسلہ جاری ہے اور اگلے 5 برس میں بتدریج اپنے مقصد میں کامیاب ہوجائیں گے۔انہوں نے کہا کہ کہوٹہ میں جنگلات کی حفاظت اور ان کے تحفظ کیلئے 300 نگہانعلاقے میں موجود ہے جن کی تعداد 3 ہزار تک کردی جائے گی تاکہ وہ جنگل کو آباد رکھنا ہے۔انہوں نے کہاکہ نئی نسل جنگل اور درختوں کی اہمیت کو بہت سمجھتے ہیں۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہم نے فیصلہ کیا ہے تدریسی اداروں میں ہفتے میں دو گھنٹے بچوں کو شجر کاری سے متعلق آگاہی کیلئے وقف کیے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ لاہور ترقیاتی منصوبوں کی آڑ میں سیکڑوں درخت کاٹ دیے گئے اب وہاں ماحولیاتی آلودگی کا تناسب اس قدر بڑھ چکا ہے کہ لوگوں کی صحت متاثر ہونا شروع ہوگئی ہے۔

وزیر اعظم

مزید :

صفحہ اول -