سب سیکرٹریٹ نہیں علیحدہ صوبہ بنایا جائے‘مخدوم احمد محمود

سب سیکرٹریٹ نہیں علیحدہ صوبہ بنایا جائے‘مخدوم احمد محمود

  

ملتان(نمائندہ خصوصی) 23 ماہ سے جھوٹ کا سہارا لیکر عوام کو بے وقوف بنانے والی حکومت کا جنوبی پنجاب کیلئے الگ سیکرٹریٹ کا قیام عوام کو لولی پاپ دینے کے مترادف ہے جسے سرائیکی وسیب کی عوام ہرگز قبول نہیں کرتی جبکہ ہر ڈویڑن ہیڈ کوارٹر پر ڈی آئی جی اور کمشنر کا سیکرٹریٹ پہلے سے موجود ہے پیپلزپارٹی ڈیمانڈ کرتی ہے کہ سب سیکرٹریٹ نہیں بلکہ علیحدہ صوبہ بنایا جائے اگر اس میں کوئی قانونی پیچیدگی یا دیر ہے تو ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ فوری طور پر صوبائی فنانشل ایوارڈ دیا جائے اور جنوبی پنجاب صوبہ کیلئے ریونیو بورڈ کے قیام کو فوری عمل میں لایا جائے ان خیالات کا(بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

اظہار پیپلزپارٹی جنوبی پنجاب کے صدر و سابق گورنر پنجاب مخدوم سید احمد محمود، سینئر نائب صدر جنوبی پنجاب و ممبر فیڈرل کونسل خواجہ رضوان عالم، چیف کوآرڈینیٹر جنوبی پنجاب و ممبر فیڈرل کونسل عبدالقادر شاھین، جنرل سیکرٹری جنوبی پنجاب نتاشہ دولتانہ نے مشترکہ میڈیا بیان میں کیا انہوں نے مزید کہا کہ پیپلزپارٹی عوامی امنگوں کی ترجمانی کرتے ہوئے صرف جنوبی پنجاب کیلئے الگ صوبہ چاہتی ہے تبدیلی سرکار نے الیکشن کے دوران 100 دن میں جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنانے کا وعدہ کیا تھا لیکن 700 دن ہونے کو ہیں الگ صوبہ بنانے کے بجائے اب سیکرٹریٹ کے نام پر عوام کو ٹرخایا جا رہا ہے پیپلزپارٹی الگ صوبہ کے حصول کیلئے کسی بھی حد تک جا سکتی ہے کیونکہ الگ صوبہ عوامی مطالبہ ہے انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی اور پنجاب کیصوبائی بجٹ کو پیپلزپارٹی مکمل طور پر مسترد کرتی ہے ایسا بجٹ جسکو آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک ڈکٹیٹ کرے وہ عوام کو ریلیف نہیں بلکہ عوام کا خون نچوڑتا ہے۔

احمد محمود

مزید :

ملتان صفحہ آخر -