وہ ملک جہاں کورونا وائرس کی دوسری لہر کا آغاز ہوگیا

وہ ملک جہاں کورونا وائرس کی دوسری لہر کا آغاز ہوگیا
وہ ملک جہاں کورونا وائرس کی دوسری لہر کا آغاز ہوگیا

  

برسلز(ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا بھر میں کورونا وائرس کے نئے کیسز اور ان میں مسلسل اضافے پر عالمی ادارے اور ماہرین اس وبا کی دوسری لہر کے آنے کا خدشہ ظاہر کرتے رہے ہیں۔ تاہم میں ماہرین کا خیال ہے کہ وہاں حالیہ کیسز دوسری لہرکاآغاز ہوسکتے ہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق بیلجیئم میں متعدی امراض کے ماہر نے خبردار کیا ہے کہ ملک میں گذشتہ ہفتے کیسز کی تعداد میں 32 فیصد اضافہ دراصل دوسری لہر کا آغاز ہو سکتا ہے۔

بی بی سی کے  مطابق وی آر ٹی ریڈیو سے بات کرتے ہوئے مارک وین رانسٹ کا کہنا تھا کہ ’ان اعداد و شمار کا جائزہ لیا جائے تو پتا چلتا ہے کہ یہ وبا کی دوسری لہر کا آغاز ہو سکتا ہے۔‘

بیلجیئم میں وائرس کا رپروڈکشن ریٹ اب بڑھ کر ایک ہو گیا ہے یعنی کووڈ 19 سے متاثرہ ایک شخص کم از کم مزید ایک شخص کو متاثر کر سکتا ہے۔ چار اپریل کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ یہ ریٹ ایک سے بڑھا ہے۔

خیال رہے بیلجیم میں اب تک مجموعی طور پر 63,499کیسز سامنے آئے ہیں جن میں سے 9ہزار800 سے زائد افراد لقمہ اجل بن گئے ہیں۔

دوسری جانب کورونا وائرس سے دنیا بھر میں متاثرہ افراد کی تعداد ایک کروڑ 40 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے جبکہ اب تک اس مرض کے باعث چھ لاکھ سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

دنیا میں کورونا سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا ملک امریکہ ہے جہاں تقریباً 36 لاکھ افراد اس مرض سے متاثر ہیں جبکہ وہاں اب تک ایک لاکھ 39 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -