الطاف حسین کی سندھ حکومت میں شمولیت کیلئے ریفرنڈم کرانے کی ہدایت

الطاف حسین کی سندھ حکومت میں شمولیت کیلئے ریفرنڈم کرانے کی ہدایت

  



                        کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین نے سندھ حکومت میں شامل ہونے سے متعلق کسی بھی فیصلے کے لئے رابطہ کمیٹی کو تین روز میں ریفرنڈم کرانے کی ہدایت کر دی ہے، ان کا کہنا تھا کہ ایم کیوایم کے کارکنوں کی لاشیں پھینکنے پراقوام متحدہ میں درخواست دیں گے اورچیف جسٹس پاکستان کو بھی درخواست دی جائے گی۔ کراچی کے لال قلعہ گراﺅنڈ میں رابطہ کمیٹی کے راکین سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ایم کیوایم کوپوائنٹ آف نوریٹرن پرنہ لے جاﺅ، جس دن ان سے پاکستانیت چھین لی گئی اس دن پاکستان کے خاتمے کااعلان ہوجائے گا۔ ان کاکہناتھاکہ کس قانون اورآئین میں لکھاہے کہ گرفتاریاں کرواورلاشیں پھینک دو۔ الطاف حسین نے دعویٰ کیا کہ پاکستان میں پہلاخودکش حملہ ان پر ہوا تھا۔ الطاف حسین نے کہاکہ انہوں نے فوج کوپیشکش کی کہ دہشت گردوں کے خلاف جنگ شروع کی جائے مگر دہشت گردوں کے خلاف کچھ نہیں ہوا اور ایم کیوایم کے کارکنوں کے خلاف جنگ شروع ہو گئی۔ سانحہ کوئٹہ سے متعلق الطاف حسین کا کہنا تھا کہ ان کی اطلاع کے مطابق کوئی بھی حملہ آور گرفتار ہوا اور نہ ہی مارا گیا بلکہ تمام دہشت گرد بھاگ گئے یا بھگا دیئے گئے، سیکیورٹی اداروں کے ہوتے ہوئے لشکر جھنگوی اور جماعت الدعوة عذاب ہیں۔ الطاف حسین نے اپوزیشن میں بیٹھنے یاحکومت سے اتحادپرکارکنوں سے سوال کیا کہ کیا وفاق اور صوبے میں اپوزیشن میں بیٹھنا چاہیے؟ تو شرکاءنے رائے دی کہ پیپلزپارٹی کے ساتھ کسی صورت حکومت میں نہ بیٹھا جائے جبکہ وفاق میں اپوزیشن کے ساتھ بیٹھا جائے۔ اس پر الطاف حسین نے رابطہ کمیٹی سے تین دن میں ریفرنڈم کرانے کی ہدایت کر دی۔

الطاف حسین

مزید : صفحہ آخر


loading...