ایران اور چھ مغربی طاقتوں کے درمیان جوہری مذاکرات کانیا دور شروع

ایران اور چھ مغربی طاقتوں کے درمیان جوہری مذاکرات کانیا دور شروع

  

                                                    ویانا (آن لائن)متنازعہ ایرانی جوہری پروگرام پر چھ مغربی طاقتوں کے ایران کے ساتھ مذاکرات کے نئے دور کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ پانچ روزہ مذاکرات کے پہلے دِن عراقی بحران پر بھی شرکاءنے توجہ مرکوز کی۔ غیر ملکی خبر رسا ں ادارے کے مطا بق یورپی ملک آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں ایران کے ساتھ شروع ہونے والے مذاکرات کے تازہ دور میں مغربی طاقتوں کی یہ کوشش ہے کہ اختلافی معاملات کو حل کرتے ہوئے جولائی کے اختتام سے قبل جامع اور حتمی ڈیل کی راہ کو ہموار کر لیا جائے۔ مبصرین کا خیال ہے کہ جولائی کے آخر تک ایرانی جوہری پروگرام پر حتمی ڈیل کا حصول مشکل ہو سکتا ہے اور بات چیت کے عمل میں توسیع کرنے کا قوی امکان موجود ہے۔ ویانا میں مذاکرات کے دوران عراق میں پیداشدہ بحران پر بھی فوکس کیا گیا۔ایران کے ساتھ مذاکراتی عمل میں عالمی طاقتوں کے نمائندوں کے ساتھ بات چیت کے عمل کی کوارڈینشن یورپی یونین کی خارجہ امور کی چیف کیتھرین ایشٹن کے سپرد ہے۔ مئی میں اسی سلسلے کے مذاکراتی عمل میں پیش رفت ممکن نہیں ہو سکی تھی۔ اس صورت حال پر فریقین نے ایک دوسرے کو پیش کردہ تجاویز کی روشنی میں حقیقت سے دوری کے تناظر میں م±وردِ الزام ٹھہرایا۔ فرانسیسی وزیر خارجہ لاراں فابیوس نے یہ تک کہہ دیا تھا کہ مذاکراتی عمل مفلوج ہو گیا ہے۔ تجزیہ کاروں کے خیال میں طویل مذاکراتی عمل کے دوران ایسے بیانات بعض اوقات معاملے کو حل کرنے کی ایک کوشش بھی ہو سکتی ہے۔چھ عالمی طاقتیں تہران حکومت سے مطالبہ کرتی ہیں کہ وہ اپنے یورینیئم افزودگی کے پروگرام کو واضح طور پر کم کرے اور افزودگی کی سطح ا±س مقام پر لائی جائے جہاں فوری طور پر جوہری ہتھیار سازی کا عمل شروع نہ کیا جا سکے۔ ایران جوہری ہتھیارسازی کی تردید کرتا ہے لیکن وہ اپنے دلائل سے عالمی طاقتوں کو قائل کرنے میں ناکام رہا ہے اور اسی باعث اقتصادی پابندیوں بدستور عائد ہیں۔ ان میں قدرے نرمی گزشتہ مہینوں کے دوران لائی گئی ہے۔ ایران ان پابندیوں کے مکمل خاتمے کا متمنی ہے۔وا ضع رہے کہ ایران کے ساتھ جاری مذاکرات میں چھ عالمی طاقتوں میں امریکا، چین، برطانیہ، فرانس، روس اور جرمنی شامل ہیں۔ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف اپنے ملک کے وفد کی قیادت کر رہے ہیں۔ عالمی طاقتوں کے وفد کی سربراہی یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ کیتھرین ایشٹن کر رہی ہیں۔

مزید :

عالمی منظر -