سپین میں جہادیوں کی بھرتی کا نیٹ ورک ، آٹھ ملزم گرفتار

سپین میں جہادیوں کی بھرتی کا نیٹ ورک ، آٹھ ملزم گرفتار

  

                                    میڈر ڈ(آن لائن)ہسپانوی پولیس نے دارالحکومت میڈرڈ کے مختلف حصوں میں چھاپے مارکر جہادیوں کی بھرتی کے ایک اور نیٹ ورک کا خاتمہ کر دیا جو گوانتانامو کے ایک سابقہ قیدی نے قائم کر رکھا تھا۔ہسپانوی وزارت داخلہ کے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق میڈرڈ میں پولیس متعدد مقامات پر ایک درجن سے زائد چھاپے مار چکی تھی اور اس دوران کم از کم آٹھ ایسے مشتبہ شدت پسندوں کو گرفتار بھی کیا جا چکا تھا، جو گوانتانامو کی امریکی جیل کے ایک سابقہ قیدی کی سربراہی میں اس نیٹ ورک کے ذریعے نئے جہادی عناصر بھرتی کرتے تھے۔ہسپانوی وزارت داخلہ کے مطابق اس نیٹ ورک کے خلاف چھان بین ابھی جاری ہے لیکن یہ امر طے ہو چکا ہے کہ اس گروپ کے اسلام پسند ارکان اسپین میں اپنے نئے ساتھیوں کو بھرتی کرتے تھے اور انہیں ’اسلامی ریاست عراق و شام‘ یا ISIL نامی عسکریت پسند گروپ کے ارکان کے شانہ بشانہ لڑنے کے لیے شام اور عراق میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں کی طرف بھجوا دیتے تھے۔وزارت داخلہ نے اسپین میں عسکریت پسندوں کے اس گروہ کے سرغنہ کے بارے میں زیادہ تفصیلات نہیں بتائیں۔ یہ بھی نہیں بتایا گیا کہ آیا اس نیٹ ورک کے مبینہ سربراہ کو بھی گرفتار کر لیا گیا ہے۔ تاہم سرکاری بیان میں یہ ضرور کہا گیا کہ اس نیٹ ورک کے سربراہ کو 2001ءمیں افغانستان سے گرفتار کیا گیا تھا جس کے بعد وہ کافی عرصہ گوانتانامو کی امریکی جیل میں قید رہا۔ ہسپانوی حکام کے مطابق یہ شدت پسند گوانتانامو سے رہائی کے بعد اسپین میں بھی رہائش پذیر رہا تھا۔اس سے قبل تیس مئی کو شمالی مراکش کے ساحلی علاقے میں اسپین کے زیر حکومت دو شہروں میں سے ایک میلِیّا میں بھی پولیس نے چھاپے مار کر چھ مشتبہ دہشت گردوں کو گرفتار کر لیا تھا۔ حکام کے مطابق Melilla میں دہشت گردوں کا یہ نیٹ ورک نئے جہادیوں کو بھرتی کرتا تھا۔

 جنہیں بعد میں مالی اور لیبیا میں سرگرم دہشت گرد تنظیموں میں شمولیت کے لیے وہاں بھیج دیا جاتا تھا۔

مزید :

عالمی منظر -