پولیس کی سرپرستی میں گاڑیاں توڑنے والا ’’شیر لاہور‘‘گلو بٹ تاحال فرار

پولیس کی سرپرستی میں گاڑیاں توڑنے والا ’’شیر لاہور‘‘گلو بٹ تاحال فرار

  

لاہور(کرائم سیل،مانیٹرنگ ڈیسک)آئی جی پنجاب نے ماڈل ٹاؤ ن آپریشن کے دوران گاڑیاں توڑنے والے گلو بٹ کی گرفتاری کا حکم دے دیا ہے ،پولیس نے چہیتے ٹاؤٹ گلو بٹ کو فرار کرادیا تھاتاہم میڈیا پر خبریں نشر ہونے کے بعد آئی جی پنجاب نے گلو بٹ کی گرفتاری کا حکم تو دے دیا ہے لیکن ان پولیس اہلکاروں کے خلاف کوئی ایکشن نہیں لیا جو گلو بٹ کی اس کارروائی کو تحفظ فراہم کررہے تھے۔ تفصیلات کے مطابق شیر لاہور کے نام سے مشہور گلو بٹ مسلم لیگ (ن) کا کارکن اور فیصل ٹاؤن پولیس کا ٹاؤٹ ہے جو ماڈل ٹاؤن آپریشن میں پولیس کے شانہ بشانہ حصہ لیتا رہا ،کارروائی کے ابتداء میں ہی گلو بٹ نے پولیس کے جوانوں کوہلہ بولنے کا کہا اور خود پولیس کی موجودگی میں گاڑیاں توڑتا رہا تاکہ عوامی تحریک کے کارکنوں پرتوڑ پھوڑ کا الزام لگایا جا سکے۔ پولیس افسران کے درمیان باقاعدہ گلو بٹ کو ہدایت کی گئی کہ آپ نے یہ فرائض سر انجام دینے ہیں۔پولیس کے چہیتے ٹاؤٹ گلو بٹ نے آپریشن کے دوران کولڈ ڈنکس ایک دکان لوٹی اور فریج سے بوتلیں نکال کر نہ صرف خود پیتا رہا بلکہ دیگر پولیس اہلکاروں کی پیاس بھی بجھاتا رہا ،اسی دوران شیر لاہور نے ڈیڑھ لیٹر کی بوتلیں گاڑی میں بیٹھے لاہو رپولیس کے ایک افسر کو بھی پیش کیں۔آپریشن کے دوران توڑ پھوڑ کرتے ہوئے ایک موقع پر گلوبٹ اور دیگر کچھ لوگوں کو تحریک منہاج القرآن کی شرٹ پہنے ہوئے بھی دیکھا گیا۔ذرائع کے مطابق گلو بٹ اپنے علاقے میں دکانداروں سے بھتہ بھی وصول کرتا ہے اگر کوئی نہ دے تو پاگل بننے کی اداکاری کرکے جان چھڑا لیتا ہے۔ایم کیو ایم کے رہنما نبیل گبول نے نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے تصدیق کی کہ گاڑیاں توڑنے والا گلو بٹ ن لیگ کا ہی کارکن ہے۔آپریشن کے بعد گلوبٹ فیصل ٹاؤن میں اپنی رہائش گاہ پر موجودتھا اور رات تک وہیں مقیم رہا تاہم میڈیا پر چلنے والی خبروں میں شناخت کے بعد پولیس نے گلو بٹ کوگرفتار کرنے کی بجائے فرار کرادیا۔ پولیس کی جانب سے کئی گھنٹے گزرنے کے بعد بھی جب گلو بٹ گرفتارنہ کیا گیا تو آئی جی پنجاب مشتاق احمد سکھیر ا نے’’ایکشن ‘‘ لیتے ہوئے گلو بٹ کو گرفتار کرکے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

مزید :

صفحہ اول -