آپریشن کیلئے فوج کو تمام وسائل دینگے،آئی ایم ایف پیکیج نہ لیتے تو دیوالیہ ہو جاتا،اسحاق ڈار

آپریشن کیلئے فوج کو تمام وسائل دینگے،آئی ایم ایف پیکیج نہ لیتے تو دیوالیہ ہو ...

  

                                    اسلام آباد(اے این این)وفاقی وزیرخزانہ اسحق ڈار نے واضح کیا ہے کہ شمالی وزیرستان آپریشن کے لئے فوج کو تمام ضروری وسائل فراہم کئے جائیں گے ۔قومی اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ پر بحث سمیٹتے ہوئے اسحق ڈارنے کہا کہ شمالی وزیرستان آپریشن کےلئے فوج کو تمام ضروری وسائل فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ آئی ڈی پیز کو بھی ہر ممکن امداد فراہم کی جائیگی اور انہیں دوبارہ بحال کریں گے جبکہ وزیرسیفران عبدالقادر بلوچ کی درخواست پر پچاس کروڑ روپے دو منٹ میں منظور کرا کے بجھوائے دیئے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ غریب کش اور وڈیروں کا بجٹ نہیں بلکہ کسانوں ، مزدوروں ، کاشتکاروں کا بجٹ ہے ، بجٹ میں صوبوں سے کوئی زیادتی نہیں کی گئی ہے ، بجٹ خسارہ کم کرنے کے ٹھوس اقدامات کیے گئے ، صوبوں کو اضافی دو سو ارب روپے دیے گئے ، صحت اور تعلیم اگرچہ صوبوں کو منتقل ہوچکے ہیں مگر پھر بھی ہم نے کئی ارب روپے اس کےلئے مختص کئے ہیں ، پیپلزپارٹی کی حکومت میں عوام کو ریلیف دینے کی اہلیت نہیں تھی مگر ہم ڈلیور کررہے ہیں ، اپوزیشن محض پوائنٹ سکورنگ کررہی ہے ، ایس آر اوز کو بتدریج تین سال میں ختم کردینگے ، پہلے بجٹ میں ہم 103 ارب روپے کے ایس آراوز ختم کریں گے ،ہم بجلی کی قیمتوں پر آج بھی سبسڈی دے رہے ہیں ، 252 ارب روپے کی سبسڈی دے چکے ہیں جوستر فیصد صارفین کو مل رہی ہے ، بجلی پیدا کرنے کی پوری لاگت وصول نہیں ہورہی ہے ، سبسڈی پچھلی حکومت نے دی جسے ہم نے جاری رکھا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہم نے ٹیکس وصولیوں کا غیر معمولی ہدف رکھا تھا اسلئے پورا نہیں ہو سکا ،غیر ملکی سرمایہ کاری کےلئے روپے کی قدر مستحکم رکھنا ضروری ہے ،ہم اگلے سال بھی روپے کو 99کی حد پر ہی رکھیں گے ،مشرق وسطی میں تیس تیس سال کرنسی ایک جگہ پر رہتی ہے ، ہم نے زر مبادلہ کے ذخائر 9ارب ڈالر تک پہنچا دیے ہیں ، داسو ڈیم کےلئے ورلڈ بنک کی گرانٹ پاکستان پراعتماد کا مظہر ہے ، آئی ایم ایف پ پیکیج مجبوراً لینا پڑا ورنہ دیوالیہ ہو جاتے ،مجموعی قرضے جی ڈی پی کا 62فیصد ہیں جنہیں ساٹھ فیصد سے نیچے لے کر آئیں گے ، یہ تاثر درست نہیں کہ بجٹ میں پنجاب کو نوازا گیا ، ،بجلی کے پیداواری منصوبوں کےلئے 205 ارب روپے رکھے گئے ہیں ، اپوزیشن سیاحت ضرور کرےگی مگر جھوٹ نہ بولے ، ہمارے اقدامات سے لوڈ شیڈنگ میں نسبتاً کمی آئی ہے ، ہم فرنس آئل کی حوصلہ شکنی کر رہے ہیں ،تنخواہوں میں اضافہ مالیاتی وسائل کو مدنظر رکھ کررہے ہیں ۔وزیرخزانہ نے کہاکہ ہم بڑی دکانوں اور سٹوروں کو بھی ٹیکس نیٹ میں لے آئے ہیں، کھاد کی قیمتوں پر چودہ ارب روپے کی سبسڈی دی جس سے چار سو روپے فی بوری قیمت کم ہو گی ،ٹریکٹروں کی قیمت بھی سستی کی ہے ، سیمنٹ پر گیس ڈویلپمنٹ چارجز میں ختم (جی ایس ڈی سی) کردیا گیا بجٹ میں فاٹا کو نظرانداز کرنے کا تاثر درست نہیں ، درآمدی خوردنی تیل پر سیلز ٹیکس سترہ سے کم کرکے 16فیصد کردیا گیا ان کمنگ انٹرنیشنل فون کالز سستی کردی گئی ،یکم اگست سے اب انٹرنیشنل کال نو روپے منٹ کے بجائے تین روپے منٹ ہو گی ، اس سے گرے ٹریفک کم ہو جائیگی ۔انہوں نے کہاکہ امسال ترسیلات زر میں 12فیصد اضافہ ہوا اور گیارہ مہینوں میں چودہ ارب ڈالر پاکستان آچکے ہیں عالمی سرمایہ کاروں کو پاکستان پراعتماد ہونا شروع ہو گیا ہے ، ہم ٹیکس کو وسیع کررہے ہیں ، سفری نظام بہتر کررہے ہیں ، ہمار ایجنڈا قومی ایجندا ہے ، ہم اپوزیشن کو ساتھ لے کر چلیں گے۔

مزید :

علاقائی -