پولیس کی گولیوں سے گیارہ افرادجاں بحق ہوئے ،رانا ثناءاللہ کو گرفتار کیا جائے :عمران خان

پولیس کی گولیوں سے گیارہ افرادجاں بحق ہوئے ،رانا ثناءاللہ کو گرفتار کیا جائے ...
پولیس کی گولیوں سے گیارہ افرادجاں بحق ہوئے ،رانا ثناءاللہ کو گرفتار کیا جائے :عمران خان
کیپشن: imran khan

  

لاہو ر(مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین عمران خان نے کہا کہ ماڈل ٹاﺅن آپریشن کے دوران پولیس کی گولیوں سے گیارہ افراد جاں بحق اور تراسی زخمی ہوئے ،شہباز شریف نے ابھی تک استعفیٰ کیوں نہیں دیا ، رانا ثناءاللہ کو گرفتار کیا جائے ، مریضوں نے بتایا کہ پولیس نے سامنے سے گولیاں چلائیں ، ایسی حرکت کبھی آمریت کے دور میں بھی نہیں ہوئی ۔عمران خان نے کہا کہ عوامی تحریک کے کارکنوں کو انصاف دلانے کے لئے طاہر القادری کے ساتھ ہیں ،مل کر جدوجہد کریں گے۔ تحریک منہاج القرآن کے مرکزی سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ حکمرانوں کو عوامی تحریک اور تحریک انصاف سے خوف تھااس لئے یہ آپریشن کیا گیاتاکہ کارکنوں میں خوف اور دہشت پیدا کی جائے ۔ عمران خان نے سوال کیا کہ منہاج القرآن کے کارکنوں کا کیا قصور تھا ، کیا یہ دہشت گرد تھے کہ پولیس نے رات ڈیڑھ بجے آپریشن کیا اور سامنے سے گولیاں چلائیں ،ایک خاتون کے منہ پر گولیاں لگیں ، عمران خان نے بتایا کہ لاہو رہائیکورٹ نے سکیورٹی انتظامات کرنے کے لئے منہاج القرآن کو کہا تھا جس کے بعد بیریئر لگائے گئے اور ماڈل ٹاﺅ ن پولیس کے ایس ایس پی نے بھی خود ہدایت کی تھی ۔جمہوریت کا نام لینے والے بتائیں پولیس تشدد سے جمہوریت ڈی ریل نہیں ہوئی ،پولیس نے گھروں میں جاکر لوگوں پر گولیاں چلائیں ،یہ کیسی جمہوریت ہے کہ معصوموں پر فائرنگ کی گئی ۔ن لیگ نے شروع سے ہی پولیس کو عسکری ونگ کے طور پر استعمال کیا ،1992میں آئی جی پنجاب کے مطابق بڑے بڑے مجرموں کو پولیس میں بھرتی کیا گیا ،پنجاب حکومت نے الیکشن میں بھی دھاندلی کے لئے پولیس کو استعمال کیا۔عمران خان نے بھی واقعہ پر بنائے گئے جوڈشیل کمیشن کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کمیشن پر کوئی اعتبارنہیں ، عوامی تحریک کے ساتھ مل کر انصاف کے لئے جدوجہد کریں گے ۔عمران خان نے مزید کہا کہ ڈاکٹر طاہر القادری کے واپس آنے کے بعد ان سے ملاقات کروں گااور اگر ضرورت پڑی تو اکٹھے سڑکوں پر نکلیں گے۔

مزید :

لاہور -اہم خبریں -